مشکے میں ایف سی کی کارروائی، 13 مبینہ شدت پسند ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایف سی کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے مبینہ شدت پسندوں میں بلوچستان لبریشن فرنٹ کے سربراہ کا بھائی اور بھانجا بھی شامل ہیں

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں فرنٹیئر کور نے ضلع آواران میں ایک کارروائی کے دورن 13 مبینہ شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

سرکاری ٹی وی نے ایف سی کے ترجمان کے حوالے سے بتایا ہے کہ یہ کارروائی تحصیل مشکے کے نواحی علاقوں میں کی گئی۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ کارروائی کا ہدف عسکریت پسند تنظیم بلوچ لبریشن فرنٹ کے ارکان تھے۔

ان کے مطابق آپریشن کے دوران فائرنگ کے تبادلے میں 13 مبینہ شدت پسند مارے گئے جن میں کئی اہم کمانڈر بھی شامل ہیں۔

فرنٹیئر کور کے ترجمان نے کہا کہ شدت پسندوں نے ایف سی کے اہلکاروں پر بھی حملہ کیا جس میں ایک اہلکار ہلاک اور دو زخمی ہو گئے۔

ایف سی کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے مبینہ شدت پسندوں میں بلوچستان لبریشن فرنٹ کے سربراہ کا بھائی اور بھانجا بھی شامل ہیں۔

مشکے بی ایل ایف کے سربراہ اللہ نذر بلوچ کا آبائی علاقہ ہے اور اسے ان کی علیحدگی پسند تنظیم کا مضبوط گڑھ تصور کیا جاتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ bbc urdu
Image caption مشکے کے علاقے کو ڈاکٹر اللہ نذر کے عسکریت پسند گروپ کا مضبوط گڑھ تصور کیا جاتا ہے

ادھر بلوچستان کے وزیرِ داخلہ سرفراز بگٹی نے بتایا ہے کہ دو کالعدم تنظیموں یونائیٹڈ بلوچ آرمی اور بلوچ لبریشن آرمی کے ارکان کے مابین لڑائی میں بھی 20 کے قریب شدت پسند مارے جانے کی اطلاعات ہیں۔

منگل کو کوئٹہ میں ایک پریس کانفرنس میں انھوں نے بتایا کہ یہ جھڑپیں دوردراز کے علاقے میں ہوئیں اور سکیورٹی فورسز اب وہاں سرچ آپریشن کرنے پر غور کر رہی ہیں تاکہ حقائق معلوم کیے جا سکیں۔

خیال رہے کہ حال ہی میں حکومتِ پاکستان کے خلاف آزادی کی جنگ لڑنے والی بلوچستان لبریشن آرمی کے دو فراری کمانڈروں نے 57 ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈالے تھے۔

اس اقدام کے بعد دہشت گردی اور شدت پسندی کے خلاف قومی لائحہ عمل کے تحت بلوچستان میں قائم کی گئی صوبائی ایپکس کمیٹی نے یہ اعلان بھی کیا ہے کہ ریاست کے خلاف برسرِ پیکار جو نوجوان مسلح کارروائی ترک کرنے کا یقین دلائیں گے، انھیں عام معافی دی جائے گی۔

اسی بارے میں