مالی بدعنوانی کا الزام، صوبائی وزیر ضیا آفریدی گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ DUNYA
Image caption ضیا اللہ آفریدی خیبر پختونخوا اسمبلی کے رکن ہیں اور ان کا تعلق تحریکِ انصاف سے ہے

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے احتساب کمیشن نے تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والے صوبائی وزیر معدنیات ضیااللہ آفریدی کو اختیارات کے ناجائز استعمال اور مالی بدعنوانی کے الزامات کی بنیاد پر گرفتار کر لیا ہے۔

ادھر قومی احتساب بیورو نے بھی سابق صوبائی وزیر معدنیات محمود زیب سمیت نو افراد کو انھی الزامات کے تحت علیحدہ علیحدہ مقدمات میں حراست میں لیا ہے۔

صوبائی احتساب کمیشن کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ان کے پاس ایسے شواہد ہیں کہ صوبائی وزیر ضیاء اللہ آفریدی مالی بدعنوانی اور اختیارات کے ناجائز استعمال میں ملوث تھے جس سے قومی خزانے کو اربوں روپے کا نقصان ہوا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ضیااللہ آفریدی کو جمعرات کو باقاعدہ طور پر گرفتار کیا گیا اور اب انھیں مزید قانونی کارروائی کے لیے احتساب عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

احتساب کمیشن کا کہنا ہے کہ بدعنوانی کے اسی مقدمے میں ڈائریکٹر جنرل محکمہ معدنیات کو پہلے ہی گرفتار کیا جا چکا ہے۔

ایسی اطلاعات ہیں کہ ضیااللہ آفریدی کو معدنیات کی تین بڑی لیزوں میں بدعنوانی پر گرفتار کیا گیا ہے ۔

صوبائی احتساب کمیشن تحریک انصاف کے دور میں ہی قائم کیا گیا اور اسے ایک خود مختار ادارے کی حیثیت حاصل ہے۔

ادھر قومی احتساب بیورو نے بھی جمعرات کو کارروائی کرتے ہوئے سابق وزیر معدنیات نوابزادہ محمود زیب کو نو اعلیٰ افسران سمیت گرفتار کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ NAB
Image caption نیب کے بیان میں کہا گیا ہے مزید قانونی کارروائی کے لیے گرفتار افراد کو احتساب عدالت کے سامنے پیش کر کے ان کا ریمانڈ حاصل کیا جائے گا

ان افراد پر فاسفیٹ کی ایک بڑی کان غیر قانونی طور پر رخسانہ نامی ایک سکول ٹیچر کو فروخت کرنے کا الزام ہے۔ اس سودے سے قومی خزانے کو تقریباً 36 کروڑ روپے کا نقصان ہوا تھا۔

نوابزادہ محمود زیب کے علاوہ گرفتار ہونے والے افراد میں سابق سیکریٹری معدنیات اور انڈسٹریز شاہ ولی خان، سابق ایڈیشنل سیکریٹری معدنیات اور موجودہ کمشنر بنوں ڈویژن عصمت اللہ خان گنڈا پور سمیت محکمہ معدنیات کے دیگر افسران شامل ہیں۔

نیب کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ سرحد ڈیویلپمنٹ اتھارٹی کے 1200 ایکڑ پر محیط فاسفیٹ کے ذخائر کی نیلامی میں مذکورہ وزیر اور ان کے اس وقت کے عملے نے قانون کے خلاف ایسے اقدامات کیے جن سے قومی خزانے کو کروڑوں روپے کا نقصان ہوا۔

بیان کے مطابق اس لیز میں سے پانچ سو ایکڑ پر محیط ذخائر ایک استانی کو غیر قانونی طور پر دیے گئے جبکہ اس معاملے میں محمود زیب کے ایک رشتہ دار بھی ملوت پائے گئے ہیں۔

نیب کے بیان میں کہا گیا ہے مزید قانونی کارروائی کے لیے گرفتار افراد کو احتساب عدالت کے سامنے پیش کر کے ان کا ریمانڈ حاصل کیا جائے گا۔

قومی احتساب بیورو نے خیبر پختونخوا میں ڈیڑھ سال کے دوران 150 سے زیادہ گرفتاریاں کی ہیں اور ان میں سیکریٹری ورکرز ویلفیئر بورڈ طارق اعوان اور ایڈیشنل سیکرٹری داخلہ ارشد خان جیسے حاضر سروس بیوروکریٹس بھی شامل ہیں۔

اسی بارے میں