’آخری شدت پسند کے خاتمے تک آپریشن جاری رہے گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شمالی وزیرستان میں گذشتہ برس شدت پسندوں کے خلاف ضربِ عضب کے نام سے کارروائی کا آغاز کیا تھا

پاکستان کے سرکاری ذرائع کے مطابق پاکستان کی بری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ آخری دہشت گرد کے خاتمے تک آپریشن ضربِ عضب جاری رہے گا۔

ان خیالات کا اظہار انھوں نے پیر کے روز لاہور میں 4 کورپس کے ہیڈکوارٹرز کے دورے کے موقعے پر کہی۔

اس موقع پر جنرل راحیل شریف کو پیشہ وارانہ اور آپریشنل امور کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی جس کے بعد انھوں نے فوجی افسران سے خطاب کیا۔

سرکاری ریڈیو کے مطابق اپنے خطاب میں انھوں نے ملک کی خارجی و داخلی سکیورٹی کی صورتحال اور شمالی وزیرستان میں جاری آپریشن ضربِ عضب، انٹیلی جنس آپریشنز اور ان کے شہری علاقوں میں امن و امان کی صورتحال پر اثرات کا ذکر کیا۔

خیال رہے کہ رواں ماہ کے آغاز میں جنرل راحیل شریف نے پاک افغان سرحد سے ملحقہ شمالی وزیرستان کے دورہ کیا تھا اور اس موقع پر بھی ان کا کہنا تھا کہ تمام شدت پسندوں، ان کے سہولت کاروں، شدت پسندی کی ترغیب دینے والوں اور ان کو مالی مدد فراہم کرنے والوں کو پکڑنے تک آپریشن کو جاری رکھا جائے گا۔

جبکہ گذشتہ ماہ وزیرِ اعظم نواز شریف اور جنرل راحیل شریف نے دہشت گردوں کے خلاف جاری آپریشن ضربِ عضب کو ملک بھر میں بلارکاوٹ جاری رکھنے پر اتفاق کیا تھا۔

Image caption فوج کے مطابق ایک برس کے دوران کارروائیوں میں 2763 شدت پسند مارے گئے

واضح رہے کہ پاکستانی فوج نے شمالی وزیرستان میں گذشتہ برس 15 جون کو شدت پسندوں کے خلاف ضربِ عضب کے نام سے کارروائی کا آغاز کیا تھا۔

ایک سال کی تکمیل پر پاکستانی فوج نے اس آپریشن کے بارے میں جو اعداد و شمار جاری کیے تھے ان کے مطابق ایک برس کے دوران کارروائیوں میں 2763 شدت پسند مارے گئے جبکہ ساڑھے تین سو کے قریب فوجی افسر اور جوان بھی ہلاک ہوئے۔

حال ہی میں بّری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے کہا تھا کہ یہ آپریشن کامیاب رہا ہے اوراب وقت آ گیا ہے کہ قبائلی علاقوں کے بعد شہری علاقوں میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کی جائے۔

اسی بارے میں