رینجرز کا ایم کیو ایم کے مرکز نائن زیرو پر چھاپہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption رینجرز نے رواں سال 11 مارچ کو بھی ایم کیو ایم کے مرکز نائن زیرو پر چھاپہ مارا تھا

پاکستان کے شہر کراچی میں رینجرز نے ایم کیو ایم کے مرکز نائن زیرو پر جمعرات کی رات گئے چھاپہ مار کر ایم کیو ایم کے دو عہدیداران کو حراست میں لے لیا۔

ترجمان رینجرزنے گرفتاریوں کی تصدیق کرتے ہوئے مستقبل میں مزید گرفتاریوں کا بھی عندیہ دیا۔

ایم کیو ایم کے میڈیا کوآرڈینیٹر واسع جلیل نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ رینجرز نے خورشید میموریل ہال پر چھاپہ مارا۔

انھوں نے بتایا کہ چھاپے کے دوران رابطہ کمیٹی کے انچارج کیف الوریٰ اور رابطہ کمیٹی کے رکن قمر منصور کو حراست میں لیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ ان دونوں کو حراست میں لیے جانے کے بعد نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا۔

واسع جلیل نے دعویٰ کہ رینجزر نے ایک بار پر بغیر کسی وارنٹ کے نائن زیرو پر چھاپ مارا۔

ایم کیو ایم کے مرکز پر چھاپے کے بعد جماعت کے رہنماؤں نے جمعرات کی رات گئے ہنگامی پریس کانفرنس کی۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بیرسٹر سیف نے کہا کہ ہمارے کارکنوں کو بلا جواز گرفتار کیا جا رہا ہے۔

انھوں نے گرفتار کارکنوں کی رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ گرفتاریاں ہماری راستہ نہیں روک سکتیں۔ ایم کیو ایم کے رہنما طاہر مشہدی کا کہنا تھا کہ آج کے چھاپے سے پاکستان کا چہرہ داغ دار کر دیا گیا۔

انھوں نے کہا کہ پوری دنیا میں قانون نافد کرنے والے ایسے اقدامات نہیں کرتے۔

فاروق ستار نے پریس کانفرنس کے خطاب کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے مرکز نائن زیرو پر رینجرز کے چھاپے کی سخت مذمت کی۔ انھوں نے کہا کہ ایسے اقدامات ہمارا حوصلہ پست نہیں کر سکتے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption ترجمان رینجرزنے گرفتاریوں کی تصدیق کرتے ہوئے مستقبل میں مزید گرفتاریوں کا بھی عندیہ دیا

دوسری جانب رینجرز کے ترجمان نے کراچی میں ایم کیو ایم کے مرکز پر چھاپے کے بارے میں ایک بیان جاری کیا ہے۔

بیان کے مطابق ترجمان کا کہنا تھا کہ رینجرز کی کارروائی کے دوران کیف الوریٰ اور قمر منصور کو گرفتار کیا گیا۔ ترجمان نے گرفتاریوں کی تصدیق کرتے ہوئے مستقبل میں مزید گرفتاریوں کا بھی عندیہ دیا۔

ان کے مطابق یہ گرفتاریاں نفرت انگیز تقاریر کا انتظام اور سہولت فراہم کرنے پر عمل میں آئیں جن میں پاکستان رینجرز کے جوانوں کو ہدف بنایا گیا تھا۔

انھوں نے کہا کہ اس طرح کے سہولت کاروں کی فہرست تیار کر لی گئی ہے اور مستقبل قریب میں مزید گرفتاریاں عمل میں آئیں گی۔

واضح رہے کہ رواں سال 11 مارچ کو بھی رینجرز نے ایم کیو ایم کے مرکز نائن زیرو پر چھاپہ مارا تھا۔

اس چھاپے میں رینجرز نے وہاں سے’سزا یافتہ ٹارگٹ کلرز‘ کی گرفتاری اور غیر قانونی اسلحے کی برآمدگی کا دعویٰ کیا تھا۔

اسی بارے میں