اورنگی میں ’پولیس مقابلے میں پانچ شدت پسند ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption کراچی میں رینجرز اور پولیس اہلکار شہر کے مختلف علاقوں اور مضافات میں خفیہ اطلاعات کی بنیاد پر شدت پسندوں اور کالعدم تنظیموں کے ارکان کے خلاف کارروائیاں کرتے رہے ہیں

پاکستان کے صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں ایک مبینہ پولیس مقابلے میں پانچ مشتبہ افراد ہلاک ہوئے ہیں جن کے بارے میں پولیس کا دعویٰ ہے کہ ان کا تعلق کالعدم تحریک طالبان پاکستان سے تھا۔

یہ واقعہ بدھ کی شب اورنگی کے علاقے مومن آباد ضیا کالونی میں پیش آیا ہے۔

کراچی پولیس کے ایس ایس پی اظفر مہیسر کا کہنا ہے کہ دو موبائلوں میں سوار اہلکار سڑک پر تلاشی لے رہے تھے کہ انھوں نے ایک مشتبہ موٹر سائیکل سوار کو رکنے کا اشارہ کیا۔

ان کے مطابق موٹر سائیکل سوار نے اہلکاروں پر فائرنگ کی اور اسی دوران ایک اور گاڑی سے بھی فائرنگ کی گئی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ فائرنگ کے بعد ملزمان کا تعاقب کیا گیا اور اس دوران فائرنگ کے تبادلے میں پانچ شدت پسند ہلاک ہوگئے ہیں۔

پولیس نے ان افراد سے بال بم اور دستی بم کے علاوہ پستول اور کلاشنکوف برآمد کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

ہلاک ہونے والوں کی تاحال شناخت نہیں ہوسکی ہے لیکن پولیس کا دعویٰ ہے کہ ان کا تعلق کالعدم تحریک طالبان سے ہے۔

واضح رہے کہ اورنگی ٹاؤن کالعدم تحریک طالبان کے مختلف دھڑوں کے زیر اثر رہا ہے، جہاں اس سے پہلے بھی کئی مبینہ مقابلوں میں مشتبہ طالبان کو ہلاک کیا گیا ہے اور اسی علاقے میں سب سے زیادہ پولیس اہلکار بھی نشانہ بنتے رہے ہیں۔

دوسری جانب جانب آرام باغ کے علاقے میں عالم دین مفتی سہیل رضا امجدی کے گھر پر فائرنگ کی گئی ہے، جس میں وہ محفوظ رہے جبکہ پولیس نے ایک مشتبہ موٹر سائیکل قبضےمیں لے لی ہے جس کے بارے میں کہا جا رہا ہے حملہ آور اس پر سوار ہوکر آئے تھے۔

کراچی میں رینجرز اور پولیس اہلکار شہر کے مختلف علاقوں اور مضافات میں خفیہ اطلاعات کی بنیاد پر شدت پسندوں اور کالعدم تنظیموں کے ارکان کے خلاف کارروائیاں کرتے رہے ہیں اور اس آپریشن کے آغاز کے بعد سے سکیورٹی اہلکاروں پر حملوں میں اضافہ ہوا ہے۔

کراچی میں رواں برس متعدد ڈی ایس پیز سمیت 50 سے زیادہ پولیس افسران اور اہلکاروں کو نشانہ بنا کر ہلاک کیا گیا ہے۔ ایسے ہی ایک حملے کے دوران سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کو بھی نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی تھی تاہم اس کارروائی میں پانچ مبینہ حملہ آور مارےگئے تھے۔

اسی بارے میں