خیبر پختونخوا میں بلدیاتی انتخابات میں دوبارہ پولنگ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption نتخابات کے پرامن انعقاد کے لیے صوبے بھر میں سکیورٹی ہائی الرٹ ہے اور پشاور شہر میں دفعہ 144 نافذ کر دی گئی ہے

پاکستان کے الیکشن کمیشن کی جانب سے خیبر پختونخوا کے 14 اضلاع میں دوبارہ بلدیاتی انتخابات کے لیے پولنگ جمعرات کو ہوئی ہے۔

یہ وہ اضلاع ہیں جہاں اس سے قبل ہونے والے انتخابات کو کالعدم قرار دیا گیا تھا۔

جمعرات کو پولنگ صبح سات بجے شروع ہوئی جو شام چھ بجے تک جاری رہی۔

انتخابات کے پرامن انعقاد کے لیے صوبے بھر میں سکیورٹی ہائی الرٹ رہی اور پشاور شہر میں دفعہ 144 نافذ تھی ہے۔

الیکشن کمیشن نے تمام پولنگ سٹیشنوں کو حساس قرار دیا ہے۔

14 اضلاع کے تقریباً 360 پولنگ سٹیشنز پر ووٹ ڈالے گئے اور لوگوں کی بڑی تعداد نے ووٹ ڈالنے کے لیے پولنگ سٹینشنز کا رخ کیا۔

پشاور سے نامہ نگار عزیز اللہ خان کا کہنا ہے کہ بلدیاتی انتخابات کے تحت پولنگ ڈیرہ اسماعیل خان، کرک، مردان، چارسدہ سمیت صوبے کے دوسرے علاقوں میں ہوئی۔

الیکشن کمیشن کے مطابق ان پولنگ سٹیشنز میں رجسٹرڈ ووٹوں کی تعداد تقریباً پانچ لاکھ ہے۔ اب تک موصول ہونے والے اطلاعات کے مطابق انتخابات پرامن ہیں۔

خیبر پختونخوا میں بلدیاتی انتخابات 30 مئی 2015 کو منعقد ہوئے تھے۔

الیکشن کمیشن نے بلدیاتی انتخابات میں مبینہ دھاندلی کے الزامات سامنے آنے کے بعد صوبے کے 14 اضلاع میں الیکشن کالعدم قرار دینے کے بعد دوبارہ پولنگ کروانے کا حکم دیا تھا۔

مئی میں 24 اضلاع میں منعقد ہونے والے بلدیاتی انتخابات میں لگ بھگ 44 ہزار نشستوں کے لیے 93 ہزار سے زیادہ امیدواروں نے حصہ لیا تھا۔

یہ انتخابات ضلع، تحصیل یا ٹاؤن کی سطح کے انتخاب جماعتی بنیاد پر جبکہ یونین کونسل یا دیہات کونسل کی سطح کے انتخابات غیر جماعتی بنیادوں پر ہوئے۔

اسی بارے میں