افغان طالبان میں اختلافات کے خاتمے کی کوششیں

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption پیر کو جاری ہونے والی ویڈیو میں شوریٰ کے اجلاس میں ملا اختر منصور کو طالبان کا نیا سربراہ تعینات کرتے ہوئے دکھایا گیا تاہم ویڈیو میں اُن کا چہرہ چھپایا گیا تھا

طالبان تحریک کے اندر نئی قیادت سے متعلق اختلافات ختم کرنے کے لیے تحریک کی علما کونسل سرگرم ہے اور نئے امیر ملا اختر منصور کے مخالف دھڑے اور ملا محمد عمر کا خاندان پرامید ہے کہ کونسل کل تک کسی فیصلے پر پہنچ جائے گی۔

اس امید کا اظہار جمعے کو ملا محمد عمر کے خاندان اور ملا اختر منصور کے مخالف دھڑے کے ترجمان عبدالمنان نیازی نے بی بی سی اردو کے ساتھ بات کرتے ہوئے کیا۔

نئے امیر ملا اختر منصور کی ویڈیو

متوازی سیاسی ڈھانچہ تسلیم نہیں

عبدالمنان نیازی نے بتایا کہ افغانستان کے بڑے علما پر مشتمل کونسل تین چار دن سے مشاورت میں مصروف ہے۔

’کل انھوں نے ہمارے دو نمائندوں ملا عبدالرسول اور ملا عبدالرزاق اخوند سے ملاقات کی اور اپنے اختلاف کا سبب بتایا ہے کہ کن عوامل کی وجہ سے انھیں ان تعیناتیوں سے اختلاف ہے۔ انھوں نے علما سے کہا کہ آپ اس قوم کے جید دینی رہنما ہیں اس لیے یہ مسئلہ ہم آپ کے سامنے لائے ہیں۔‘

ترجمان کا کہنا تھا کہ ان نمائندوں نے اس کونسل کو ان کی جگہ فیصلے کا اختیار دے دیا ہے کہ وہ کسی ایسی شخصیت کو مقرر کریں جو اس نظام کی قیادت کی صلاحیت رکھتا ہو۔

عبدالمنان نے بتایا کہ ہوسکتا ہے یہ علما آج (جمعے کو) ملا اختر منصور کے لوگوں سے مشاورت کر رہے ہوں اور کل واپس لوٹیں گے۔ ’یہ افغانستان کے مشہور علما ہیں۔ امید ہے کہ ملا اختر منصور بھی ان کو کسی بھی فیصلے کا اختیار دے دیں گے جس کے بعد علما اپنا فیصلہ سنا دیں گے۔‘

غیر شرعی انتخاب

ایک سوال کے جواب میں کہ وہ کتنے پرامید ہیں کہ علما ان کے حق میں فیصلے دیتے ہوئے ملا اختر منصور کو ہٹا دیں گے؟ انھوں نے کہا کہ یہ بات تو اِن علما نے پہلے ہی انھیں بتا دی تھی کہ آپ کا انتخاب غیرشرعی طریقے سے ہوا ہے، اس میں علما شامل نہیں تھے اور اس میں طالبان شوری کے لوگ موجود نہیں تھے۔‘

انھوں نے مزید کہا: ’اس قیادت یا عہدے کے فرائض کی انجام دہی کے لیے جو شرائط ہیں آپ ان پر پورا نہیں اترتے ہیں۔ یہ قوم آپ کے تحت متحد ہونے کو تیا نہیں ہے۔‘

ان کا کہنا کہ مسئلہ تقریباً حل ہو گیا ہے اور جلد اس کا اعلان کر دیا جائے گا۔

خیال رہے کہ طالبان رہنما ملا محمد عمر کی ہلاکت کے بعد تحریک کی قیادت کے معاملے پر پیدا ہونے والے اختلافات پر تبصرہ کرتے ہوئے افغان حکومت نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ وہ ملک میں کسی متوازی سیاسی ڈھانچے کو قبول نہیں کرے گی۔

اسی بارے میں