فوجی ہیلی کاپٹر کو حادثہ، 12 افراد کی لاشیں نکال لی گئیں

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption آئی ایس پی آر کے مطابق جائے حادثہ پر امدادی کارروائی مکمل کر لی گئی ہے

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع مانسہرہ کے نواح میں فوجی ہیلی کاپٹر کے حادثے کے بعد سرچ آپریشن مکمل کر لیا گیا ہے اور حادثے میں ہلاک ہونے والے 12 افراد کی لاشیں نکال لی گئی ہیں۔

فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق جائے حادثہ پر تلاش اور امدادی کارروائی مکمل کر لی گئی ہے۔

یہ فوجی ہیلی کاپٹر گذشتہ روز دوپہر کے وقت ضلع مانسہرہ کے نواح میں خراب موسم کے باعث گر کر تباہ ہو گیا تھا جس کے نتیجے میں فوج کے طبی عملے سمیت 12 فوجی اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔

آئی ایس پی آر نے اپنے مختصر بیان میں بتایا ہے کہ ہیلی کاپٹر میں طبی ٹیم اور عملے سمیت 12 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

آئی ایس پی آر کے مطابق جہاز کے دونوں پائلٹ میجر ہمایوں، میجر مزمل اور جہاز میں سوار فوج کے طبی عملے کے افراد میجر ڈاکٹر شہزاد، میجر ڈاکٹر عاطف، میجر ڈاکٹر عثمان کی لاشیں اُن کے آبائی علاقے میں روانہ کر دی گئی ہیں۔

حادثے میں حوالدار منیر عباسی، حوالدار آصف، نائیک عامر سعید، نائیک قاصد مقبول، سپاہی رحمت اللہ، نرسنگ اسسٹنٹ امان اللہ اور سپاہی وقار بھی ہلاک ہوئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ہیلی کاپٹر میں طبی ٹیم اور عملے سمیت 12 افراد ہلاک ہوئے ہیں

بتایا گیا ہے کہ ہیلی کاپٹر راولپنڈی سے گلگت روانہ ہوا تھا۔ حادثے کی وجہ بظاہر موسم کی خرابی بتائی گئی ہے۔

اس سے قبل ضلع مانسہرہ کے ڈی پی او نجیب الرحمن نے بی بی سی کے نامہ نگار عزیز اللہ خان کو بتایا تھا کہ ہیلی کاپٹر کو راولپنڈی سے گلگت جاتے ہوئے مانسہرہ سے 70 کلومیٹر دور مہار نامی علاقے میں حادثہ پیش آیا۔

ادھر چترال میں ریلیف آپریشن میں مصروف ہیلی کاپٹر کی کریش لینڈنگ کی اطلاعات بھی ملی ہیں۔

بتایا گیا ہے کہ ہیلی کاپٹر نے تورکو کے مقام کر کریش لینڈنگ کی اور اس کے نتیجے میں دو افراد زخمی ہو گئے۔

خیال رہے کہ رواں سال مئی میں گلگلت بلتستان میں پاکستانی فوج کا ایک ہیلی کاپٹر لینڈنگ سے کچھ ہی دیر پہلے گر کر تباہ ہو گیا تھا جس میں پائلٹوں کے علاوہ ناروے اور فلپائن کے سفیر اور ملائیشیا اور انڈونیشیا کے سفیروں کی بیگمات ہلاک ہو گئی تھیں۔

اسی بارے میں