قلات میں فائرنگ، اہم قبائلی رہنما بیٹے سمیت ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اس حملے کے نتیجے میں علی محمد، ان کا آٹھ سالہ بچہ اور دو دیگر افراد ہلاک ہوگئے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے ضلع قلات میں فائرنگ کے واقعے میں اہم مقامی قبائلی رہنما سمیت چار افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

قبائلی رہنما علی محمد حسنی کے قافلے پر حملے کا یہ واقعہ بدھ کے روز ضلع قلات کے علاقے گدر میں پیش آیا۔

سوراب میں انتظامیہ کے ایک اہلکار نے بتایا کہ قبائلی شخصیت علی محمد حسنی ضلع خاران سے سوراب کی جانب جا رہے تھے۔

ان کے قافلے میں شامل گاڑیاں جب زبر کراس کے مقام پر پہنچیں تو پہلے سے گھات لگائے نامعلوم مسلح افراد نے ان پر حملہ کر دیا۔

اس حملے کے نتیجے میں علی محمد، ان کا آٹھ سالہ بیٹا اور دو دیگر افراد ہلاک ہوگئے جبکہ فائرنگ سے تین دیگر افراد زخمی بھی ہوئے۔

واقعے کے بعد حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

انتظامیہ کے اہلکار کے مطابق یہ حملہ اس قدر شدید تھا کہ قافلے میں شامل ایک گاڑی میں آگ لگ گئی جس کے نتیجے میں ہلاک ہونے والا ایک شخص کی لاش جھلس بھی گئی۔

انتظامیہ کے ایک اہلکار کے مطابق تاحال اس حملے کا مقدمہ درج نہیں کیا گیا جس کے باعث یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ اس حملے کا محرک قبائلی دشمنی ہے یا کچھ اور۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز صوبہ بلوچستان میں ہی بم دھماکے اور تشدد کے دیگر واقعات میں ایک پولیس اہلکار سمیت پانچ افراد ہلاک ہوئے تھے۔

ہلاک ہونے والوں میں سے چار افراد کی تشدد زدہ لاشیں بلوچستان کے مختلف علاقوں سے بر آمد کی گئی تھیں۔

اسی بارے میں