پنجاب میں شدت پسند تنظیمیں اب بھی متحرک؟

Image caption پنجاب کے وزیرِ داخلہ شجاع خانزادہ کو اٹک میں ان کی رہائش گاہ پر نشانہ بنایا گیا

پاکستان کے صوبے پنجاب کے شہر اٹک میں اتوار کو صوبائی وزیر داخلہ شجاع خانزادہ پر ہونے والے خودکش حملے سے بظاہر ایسا لگتا ہے کہ پنجاب میں نہ صرف شدت پسند تنظیمیں بدستور فعال ہیں بلکہ وہ کسی بھی بڑی شخصیت کو نشانہ بنانے یا کوئی بڑی کاروائی کرنے کی صلاحیت بھی رکھتی ہیں۔

گزشتہ سال دسمبر میں پشاور میں آرمی پبلک سکول وکالج پر ہونے والے طالبان حملے میں 150 کے قریب طلباء اور اساتذہ کی ہلاکت کے واقعہ نے پوری قوم کو ہلاکر رکھ دیا تھا۔

’پنجاب حکومت سکیورٹی میں خامی سے انکار نہیں کر سکتی‘

اس کے بعد پاکستان کی سیاسی اور فوجی قیادت نے بھی پہلی مرتبہ سر جوڑ کر قومی ایکشن پلان ترتیب دیا جس کے تحت ملک میں موجود تمام شدت پسند تنظیموں کے خلاف بلا تفرق کاروائی کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

اس پلان کے تحت صوبہ پنجاب، جہاں اس سے پہلے عسکری تنظیموں کے خلاف کاروائیوں میں سست روی سے کام لیا جارہا تھا، وہاں بھی کاروائیاں شروع کی گئیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ PID
Image caption پشاور واقعے کے بعد دہشت گردی کے خاتمے کے لیے نیشنل ایکشن پلان مرتب کیا گیا تھا

ملک بھر میں خیبر سے لے کراچی تک ہر طرف انٹیلیجنس معلومات کے تناظر میں بڑے پیمانے پر آپریشن کئے گئے جس میں حکام کے مطابق ہزاروں دہشت گرد گرفتار اور بڑی تعداد میں ہلاک کئے گئے۔ یہ کاروائیاں کافی حد تک موثر بھی رہی ہے کیونکہ عمومی طورپر ملک میں دہشت گردی کے واقعات میں کمی دیکھی جارہی ہے۔

تاہم شجاع خانزادہ پر ہونے والے حملے نے ایک مرتبہ پھر کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔ تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ پنجاب میں حالیہ حملے سے بظاہر لگتا ہے کہ وہاں شدت پسندوں کا نیٹ ورک بدستور فعال ہے اور وہ کہیں بھی حملہ کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

شدت پسندی پر تحقیق کرنے والے سنیئر تجزیہ نگار اور مصنف ڈاکٹر خادم حسین کا کہنا ہے کہ پنجاب میں عسکری تنظیموں کا ایک مضبوط نیٹ ورک پہلے سے موجود تھا جو ماضی میں جی ایچ کیو اور دیگر حساس فوجی و حکومتی اہداف پر ہونے والے حملوں سے بھی ثابت ہوتا ہے۔

انھوں نے کہا کہ حالیہ حملہ اس بات کی دلیل ہے کہ کالعدم تنظیمیں لشکر جھنگوی اور تحریک طالبان پاکستان بدستور بھر پور حملہ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ ان کے بقول شاید اس کاروائی کی منصوبہ بندی لشکر جھنگوی اور ٹی ٹی پی نے مل کر کی ہے تاکہ پنجاب حکومت کی قائم کردہ محکمہ انسدادِ دہشت گردی پر دباؤ ڈالا جاسکے یا ان کو کاروائیوں سے روکا جاسکے۔

خادم حسین کے مطابق قومی ایکشن پلان کے بارے میں عمومی طورپر یہ تاثر بھی پایا جاتا ہے اس کے تحت جس طرح کی کاروائیاں فاٹا، خیبر پختونخوا، کراچی اور بلوچستان میں کی گئی اس طرح کے آپریشن پنجاب میں کم ہی نظر آئے۔

اگرچہ شجاع خانزادہ پر حملے کی ذمہ داری تحریک طالبان پاکستان جماعت الحرار کی جانب سے قبول کی گئی ہے تاہم بعض میڈیا اطلاعات کے مطابق کالعدم لشکر جھنگوی کے کسی ایک گروپ نے بھی اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

جماعت الحرار کے ترجمان احسان اللہ احسان کی جانب سے ذرائع ابلاغ کو جاری کیے گئے مختصر ای میل پیغام میں کہا گیا ہے کہ ان کی تنظیم وزیر داخلہ پر حملے کی ذمہ قبول کرتی ہے۔

تاہم انہوں نے ساتھ یہ بھی کہا ہے کہ ’ ہم اس حملے کےلیے اپنی ایک دوست تنظیم کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption دہشت گردوں کی جانب سے سکیورٹی فوسرز کے علاوہ اقلیتی برادری کو سب سے زیادہ نشانہ بنایا گیا

ان لفاظ سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ حملہ دو تنظیموں کی مشترکہ کاروائی ہوسکتی ہے۔

’ملک اسحاق کی ہلاکت کا بدلہ‘

پنجاب میں عسکری تنظیموں پر کام کرنے والے اکثریتی تجزیہ نگاروں کا موقف ہے کہ غالب امکان یہی ہے کہ شجاع خانزادہ پر حملہ لشکر جھنگوی کے سابق امیر ملک اسحاق اور ان کے بیٹے کی پولیس حملے میں ہلاکت کا ردعمل ہوسکتا ہے۔

بعض اخباری اطلاعات کے مطابق پنجاب میں گزشتہ کچھ عرصے میں 50 کے قریب شدت پسند اور کالعدم تنظمیں سرگرم عمل رہی ہیں۔

بتایا جاتا ہے کہ جنوبی پنجاب ان تنظیموں کا اہم گڑھ رہا ہے جہاں ماضی میں کشمیر میں کاروائیوں کےلیے بھی صف بندیاں ہوتی رہی ہیں۔ پنجاب کی سب سے بڑی سیاسی جماعت مسلم لیگ ن کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ ماضی میں کالعدم تنظیموں کےلیے نرم رویہ رکھتی رہی ہے بلکہ یہاں تک کہا جاتا ہے کہ عام انتخابات کے دوران کئی مواقعوں پر مسلم لیگ نون اور کالعدم تنظیموں کے درمیان خفیہ اتحاد بھی رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پنجاب کے ضلع مظفرگڑھ میں 29 جولائی کو پولیس کی ایک کارروائی کے دوران کالعدم شدت پسند تنظیم لشکرِ جھنگوی کے بانی و سابق امیر ملک اسحاق سمیت 14 شدت پسند ہلاک ہوگئے تھے

تاہم قومی ایکشن پلان کے اعلان کے بعد مسلم لیگ ن جو وفاق اور پنجاب میں حکومت کر رہی ہے نے بھی دہشت گردی کے خلاف اعلان جنگ بلند کیا ہے۔ یہ آمر بھی اہم ہے کہ شجاع خانزادہ مسلم لیگ ن کے پہلے ایسے بڑے رہنما ہے جو شدت پسندوں کے حملے کا نشانہ بنے ہیں۔ اس سے پہلے عوامی نیشنل پارٹی اور پیپلزپارٹی کے کئی بڑے رہنما، ممبران اسمبلی اور کارکن عسکریت پسندوں کے حملوں کا نشانہ بنتے رہے ہیں۔

اسی بارے میں