’مودی صاحب سمجھتے ہیں بھارت خطے کی سپرپاور ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ’کشمیر اگر مسئلہ نہیں ہے تو بھارت کی سات لاکھ فوج وہاں کیا کر رہی ہے؟‘

وزیر اعظم پاکستان کے مشیر برائے قومی سلامتی و امور خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ نریندر مودی جب سے اقتدار میں آئے ہیں سمجھ رہے ہیں کہ ہندوستان خطے کی سپرپاور ہے لیکن پاکستان ایٹمی طاقت ہے اور اپنا دفاع کرنا جانتا ہے۔

پاکستان ٹیلی ویژن کو انٹرویو دیتے ہوئے سرتاج عزیز کا کہنا تھا کہ اوفا اعلامیے پر عمل درآمد نہ ہونے کی وجہ سے مذاکرات نہیں ہوئے اور اعلامیے کے وقت بھارت نے کشمیر کا لفظ نہ لکھنے کا کہا تھا۔

سرتاج عزیز نے مذاکرات کے لیے پاکستانی ایجنڈا اوفا سمجھوتے کے عین مطابق قرار دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی پر مذاکرات سے انحراف نہیں کیا۔ ’جب بھارت سے دہشت گردی پر بات ہو سکتی ہے تو دوسرے مسئلوں پر بات کیوں نہیں ہو سکتی؟‘

انھوں نے سوال کیا کہ ’کشمیر اگر مسئلہ نہیں ہے تو بھارت کی سات لاکھ فوج وہاں کیا کر رہی ہے؟‘

انھوں نے کہا کہ پوری دنیا تسلیم کرتی ہے کہ کشمیر دونوں ایٹمی ملکوں کے درمیان اہم مسئلہ ہے جبکہ اس کا حل نکالنا شملہ معاہدے میں شامل ہے۔

مشیر خارجہ کے مطابق جامع مذاکرات کے آٹھ نکات میں دہشت گردی بھی شامل تھا، ’جب اس پر بات ہوسکتی ہے تو دوسرے نکات پر کیوں نہیں؟‘

انھوں نے واضح کیا کہ کشمیر تمام تصفیہ طلب امور میں شامل ہے جبکہ امن اور ترقی پاکستان اور بھارت کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔

انھوں نے لائن آف کنٹرول پر کشیدگی کو انسانی مسئلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس مسئلے کو ہر سطح پر اٹھایا جائے گا۔

اسی بارے میں