کوئٹہ میں فائرنگ سے اے ایس آئی ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ابتدائی تحقیقات کے مطابق اے ایس آئی کی ہلاکت ٹارگٹ کلنگ کا واقعہ ہے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں فائرنگ کے ایک واقعے میں پولیس کے ایک اسسٹنٹ سب انسپکٹر علی نواز ہلاک گئے ہیں۔

شالکوٹ پولیس کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ پولیس اہلکار کی ہلاکت کا واقعہ منگل کو کوئٹہ شہر میں ہزار گنجی کے علاقے میں پیش آیا۔ انھوں نے بتایا کہ بتایا کہ اے ایس آئی نوشکی بس اسٹاپ پر موجود تھے کہ اس علاقے میں نامعلوم مسلح افراد نے انھیں گولیوں سے نشانہ بنایا۔

اہلکار کا کہنا تھا کہ حملہ آوروں نے اے ایس آئی کو تین گولیاں ماریں جن میں سے دو گولیاں ان کی گردن اور ایک سر میں لگی جس کے نتیجے میں وہ موقعے پر ہی ہلاک ہو گئے۔

ابتدائی تحقیقات کے مطابق یہ ٹارگٹ کلنگ کا واقعہ ہے۔

دوسری جانب فرنٹیئر کور نے دو مختلف علاقوں میں تخریب کاری کے منصوبے ناکام بنائے ہیں۔

کوئٹہ میں فرنٹیئر کور کے ترجمان کے مطابق نامعلوم افراد نے آر ڈی 238 کے علاقے میں 15 کلو دھماکہ خیز مواد نصب کیا تھا جسے بر آمد کر کے ناکارہ بنا دیا گیا۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ دھماکہ خیز مواد کے ذریعے ایف سی اہلکاروں اور گیس پائپ لائنوں کو نشانہ بنانے کا منصوبہ بنایا گیا تھا۔

فرنٹیئر کور کے ترجمان کے مطابق ڈیرہ مراد جمالی کے علاقے قیدی شاخ میں بھی چھ کلو دیسی ساختہ بارودی سرنگ بھی نصب کی گئی تھی۔ قیدی شاخ میں دیسی ساختہ بم کو بر آمد کر کے ناکارہ بنا دیا گیا۔

ادھر بلوچستان کے ساحلی ضلع گوادر میں گذشتہ شب دستی بم کے ایک حملے دو افراد ہلاک اور دو زخمی ہوگئے۔

گوادر پولیس کے ایک اہلکار نے بتایا کہ یہ حملہ پیر کی شب ایئر پورٹ روڈ پر ملا فاضل چوک پر درزی کی ایک دکان پر کیا گیا۔

اسی بارے میں