چندہ اکٹھا کرنے والی این جی اوز کے جامع کوائف طلب

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption کسی کو بھی معلوم نہیں ہے کہ لوگوں سے اکٹھا کیا جانے والا چندہ کن مقاصد کے لیے استعمال ہو رہا ہے: عدالت

پاکستان کی سپریم کورٹ نے وفاقی اور چاروں صوبائی حکومتوں سے اُن غیر سرکاری تنظیموں سے متعلق جامع تفصیلات طلب کر لی ہیں جو متعقلہ اداروں میں رجسٹرڈ نہ ہونے کے باوجود لوگوں سے چندہ اکٹھا کر رہی ہیں۔

بدھ کو چیف جسٹس جواد ایس خواجہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے غیر سرکاری تنظیموں کی رجسٹریشن سے متعلق مقدمے کی سماعت کی۔

عدالت کا کہنا تھا کہ کسی کو بھی معلوم نہیں ہے کہ لوگوں سے اکٹھا کیا جانے والا چندہ کن مقاصد کے لیے استعمال ہو رہا ہے۔

حکومت کی طرف سے نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد کے بارے میں ایک رپورٹ عدالت میں پیش کی گئی جس پر عدالت نے عدم اطمینان کا اظہار کیا۔

عدالت کا کہنا تھا کہ اس رپورٹ کو دیکھ کر ایسا محسوس ہوتا ہے کہ حکومت کا نیشنل ایکشن پلان کو پورے طریقے سے نافذ کرنے کا کوئی ارادہ ہے اور نہ ہی وہ بادی النظر میں اس کی اہلیت رکھتی ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ حکومت سے غیر سرکاری تنظیموں کی رجسٹریشن کے طریقہ کار اور انھیں دیگر ممالک سے ملنے والی فنڈنگ سے متعلق جواب مانگا گیا تھا لیکن ابھی تک تسلی بخش جواب نہیں دیا گیا۔

اس مقدمے کی سماعت کے دوران عدالت عظمیٰ کا کہنا تھا کہ دیگر ممالک سے ان غیر سرکاری تنظیموں کے لیے آنے والی فنڈنگ روک دی جائے تو ملک میں شدت پسندی کے واقعات میں نمایاں کمی آسکتی ہے۔

جسٹس جواد ایس خواجہ کا کہنا تھا کہ وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں میں ایک غیر معروف این جی او کو تین کروڑ روپے دیے گئے لیکن حکومت کے کسی بھی ادارے نے یہ زحمت گوارا نہیں کی کہ دیکھا جائے کہ اس تنظیم کو اتنی بڑی رقم کن مقاصد کے لیے دی گئی ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ کچھ غیر سرکاری تنظیمیں اچھا کام کر رہی ہیں لیکن حکومت کے پاس احتساب کا کوئی نظام نہیں ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption غیر سرکاری تنظیموں کے بارے میں ایک مانٹیرنگ کمیٹی بنائی جا رہی ہے جو ان تنظیموں کے بارے میں شکایات کا جائزہ لے کر ان کا ازالہ کرے گی

بینچ میں موجود جسٹس قاضی فائض عیسیٰ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ حکومت ٹیکس نہ دینے والوں کے خلاف تو بہت جلد کارروائی کرتی ہے لیکن کالا دھن اور چندہ اکٹھا کرنے والوں کے خلاف کیوں کارروائی نہیں کرتی۔

اُنھوں نے کہا کہ بہت سے کالعدم تنظیمیں بھی مختلف ناموں سے لوگوں سے چندہ اکٹھا کر رہی ہیں لیکن ابھی تک عدالت میں ایسی کوئی رپورٹ جمع نہیں کروائی گئی کہ ان تنظیموں کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔

مقدمے کی مزید سماعت ایک ہفتے تک کے لیے ملتوی کر دی گئی۔

خیال رہے کہ وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان نے گذشتہ ماہ قومی اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان میں کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیموں کی رجسٹریشن کی لیے ایک شفاف نظام لایا جا رہا ہے اور اس ضمن میں ایک مانٹیرنگ کمیٹی بنائی جا رہی ہے جو ان تنظیموں کے بارے میں شکایات کا جائزہ لے کر ان کا ازالہ کرے گی۔

اسی بارے میں