خیبر پختونخوا میں پولیو میں 75 فیصد کمی

تصویر کے کاپی رائٹ APP

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا میں پولیو کے خاتمے کی کوششوں کے باعث اس بیماری کی شرح میں 75 فیصد کمی آئی ہے اور سات اضلاع سے اس کا مکمل طور پر خاتمہ کر دیا گیا ہے۔

اس بات کا انکشاف جمعرات کو پشاور میں بچوں کے عالمی ادارے یونیسیف کے زیرِ اہتمام صحافیوں کے لیے منعقدہ ایک تربیتی ورکشاپ کے دوران کیا گیا۔

صوبہ خیبر پختونخوا میں پولیو سے متاثرہ 12 اضلاع میں پولیو کی تین روزہ خصوصی مہم 14 ستمبر سے شروع کی جائے گی۔

ایمرجنسی آپریشن سینٹر خیبرپختونخوا اور یونسیف کے اہلکاروں نے صحافیوں کو بتایا کہ پاکستان میں پولیو کی شرح میں نمایاں کمی آ رہی ہے اور گذشتہ سال کے مقابلے میں رواں برس اگست تک صرف پولیو کے آٹھ کیس سامنے آئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ گذشتہ سال رپورٹ ہونے والے کل کیسوں کی تعداد 143 تھی۔

بریفنگ میں یہ بھی بتایا گیا کہ صوبے کے سات اضلاع کوہاٹ، سوات، کرک، مردان، بونیر، تورغر اور بنوں سے اس موذی مرض کا مکمل طور پر خاتمہ کر دیا گیا ہے اور ان اضلاع سے پولیو کا کوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا۔

ورکشاپ کے شرکا کو بتایا گیا کہ صوبے کے 12 متاثرہ اضلاع میں 14 ستمبر سے تین روزہ خصوصی مہم کا آغاز کیا جا رہا ہے اور اس دوران پانچ سال سے کم عمر کے 53 لاکھ، 55 ہزار 397 بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلائے جائیں گے جس کے لیے 14 ہزار 330 موبائل ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں۔

اس کے علاوہ 1,550 فکسڈ، 728 ٹرانزٹ اور107 رومنگ ٹیمیں بھی بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلائیں گی جبکہ 3,399 ایریا انچارج اس پورے عمل کی نگرانی کریں گے۔

پولیو ٹیمیں تین روزہ مہم کے دوران 26 لاکھ، 57 ہزار 779 گھروں میں جا کر بچوں کو پولیو کی ویکسین اور وٹامن اے کے کیپسول فراہم کیے جائیں گے۔

بریفنگ میں یہ بھی بتایا گیا کہ رواں سال کے پہلے آٹھ ماہ کے دوران ملک میں پولیو کے مجموعی طور پر 32 کیس رپورٹ ہوئے جن میں خیبر پختونخوا میں 13، فاٹا میں 10، بلوچستان میں پانچ جبکہ سندھ میں چار کیس شامل ہیں۔

ورکشاپ کے دوران پولیو کے خاتمے میں میڈیا کے کردار پر بھی تفصیلی روشنی ڈالی گئی اور اس امر پر زور دیاگیا کہ میڈیا والدین سمیت معاشرے کے تمام طبقات میں شعور و آگہی اجاگر کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کرے۔

ورکشاپ میں ایمرجنسی آپریشن سینٹر خیبرپختونخوا کے کوآرڈی نیٹر اکبر خان، ای او سی کے فوکل پرنس ڈاکٹر امتیاز علی شاہ، یونیسیف کے ڈاکٹر جوہر، ڈاکٹر علاؤالدین، راحیل خان اور میڈیا افسر شاداب یونس نے شرکت کی۔

اسی بارے میں