’بھارت پاکستان میں دہشت گردی کو فروغ دے رہا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ’ملا عمر کی ہلاکت کے بعد چونکہ طالبان میں قیادت کی منتقلی کا عمل چل رہا ہے اسی لیے مذاکرات تعطل کا شکارہیں‘

وزیر اعظم پاکستان نواز شریف کے مشیر برائے امور خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ بھارت پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت اور دہشت گردی کو فروغ دے رہا ہے۔

کراچی کی ایک نجی یونیورسٹی میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ بھارت کے پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت اور دہشت گردی پھیلانے سے متعلق ثبوتوں پر مشتمل دستاویزات تیار کر لی گئی ہے جو اقوامِ متحدہ کو فراہم کی جائیں گی۔

انھوں نے بتایا کہ ان دستاویزات کو قومی سلامتی کے مشیروں کی ملاقات میں پیش کیا جانا تھا لیکن چونکہ یہ ملاقات نہیں ہوسکی اس لیے اب ان دستاویزات کو نیویارک لے جائیں گے اور اقوام متحدہ کو دیں گے۔

واضح رہے کہ پاکستان اور بھارت کی حکومتوں کے قومی سلامتی کے مشیروں کے درمیان گذشتہ ماہ 24 اگست کو ملاقات ہونی تھی جو دونوں ملکوں کے درمیان ایجنڈے پر اختلاف کی وجہ سے منسوخ کر دی گئی تھی۔

پاکستان اور افغانستان کے تعلقات میں حالیہ کشیدگی کی وجوہات پر بات کرتے ہوئے مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا کہ ’افغانستان میں تیزی سے خانہ جنگی اور شورش بڑھ رہی ہے جس کے ردعمل میں کہاگیا کہ پاکستان نے طالبان سے بات چیت کرکے اس شورش کو کم کیوں نہیں کیا۔‘

انھوں نے کہا کہ ’بنیادی بات یہ ہے کہ بات چیت سے شورش میں کمی نہیں آتی جب تک کہ مفاہمت نہ ہوجائے۔ اسی لیے ایک بار پھر کوشش کر رہے ہیں کہ مفاہمت کا عمل دوبارہ بحال ہو۔‘

سرتاج عزیز نے کہا کہ ’ملا عمر کی ہلاکت کے بعد چونکہ طالبان میں قیادت کی منتقلی کا عمل چل رہا ہے اسی لیے مذاکرات تعطل کا شکارہیں۔‘

انھوں نے امید ظاہر کی کہ مفاہمت کے لیے مذاکرات کا عمل شروع ہوتے ہی افغانستان میں جاری شورش میں کمی آئے گی جس کے ساتھ ساتھ پاکستان اور افغانستان کے تعلقات میں بھی بہتری آئے گی۔

اسی بارے میں