پاکستان کے بالائی علاقوں سے قدرتی آفات کے باعث نقل مکانی

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان کے شمالی علاقہ جات گلگت بلتستان میں حکام کے مطابق حالیہ برسوں کے دوران شدید بارشوں، سیلاب اور پہاڑی تودے گرنے جیسی قدرتی آفات کی تعداد اور شدت میں اضافہ ہوا ہے جس کے باعث کئی خاندانوں کو اپنے آبائی علاقوں سے نقل مکانی کرنا پڑی ہے۔

68 سالہ اسحاق خان گلگت بلتستان کے ضلع غذر کی وادی داماس میں رہتے ہیں۔ پانچ برس پہلے آنے والے سیلاب نے ان کے پورے گاؤں کو ملیا میٹ کر دیا۔

انھوں نے نیا گھر تو بنا لیا ہے مگر اتنے پیسے نہیں کہ منوں پتھروں تلے دبے کھیت اور باغات کی زمین کو دوبارہ کاشت کے قابل بنا سکیں۔ اب بھی موسم گرما میں سیلاب کا ڈر انہیں سونے نہیں دیتا۔

’یہاں پر اب بھی خطرہ ہے سیلاب آنے کا۔ کہیں جانے کے قابل بھی نہیں ہیں۔ میرے پاس پیسے بھی نہیں ہیں، زمین بھی نہیں ہے۔ ادھر وڈیرے لوگ تھے وہ سب کوئی اسلام آباد، کوئی گلگلت کوئی کہیں کوئی کہیں۔ میں کدھر جاؤں۔‘

انھوں نے بتایا کہ ان کے باغ سے ہر سال بیس من بادام کی پیداوار ہوتی تھی جبکہ اخروٹ اور انگور کے باغ اور کھیت بھی تھے جو سب سیلاب کے ساتھ آنے والے پہاڑی پتھروں تلے دب گئے اور وہ قلاش ہوگئے۔

Image caption معصوم شاہ گ کا اپنا لکڑی کا کارخانہ تھا اور کھیت اور باغات بھی مگر ایک رات سیلاب سب کچھ بہالے گیا

بات چیت کے دوران محمد اسحاق کا دایاں ہاتھ مسلسل ہل رہا تھا اور وہ بائیں ہاتھ سے اسے قابو کرنے کی کوشش کرتے تھے۔ انھوں نے بتایا کہ سیلاب کی تباہ کاری کے بعد ان پر فالج کا حملہ ہوا جس سے ان کا دایاں کاندھا اور ہاتھ متاثر ہوئے اور اب وہ محنت مزدوری بھی نہیں کرسکتے۔

اسی طرح کی کہانی بیالیس سالہ معصوم شاہ کی بھی ہے جو ضلع غذر کی ہی وادی درکوت میں رہتے تھے مگر اب وہ گلگلت بلتستان منتقل ہوگئے ہیں۔ ان کا اپنا لکڑی کا کارخانہ تھا اور کھیت اور باغات بھی مگر ایک رات سیلاب سب کچھ بہالے گیا۔

گلگت شہر میں واقع ایک کارخانے میں آرا مشین پر کام کرتے ہوئے انھوں نے بتایا کہ ’وہاں پر میرا اپنا کارخانہ تھا لیکن یہاں پر اب مزدوری کرتا ہوں کسی کے پاس۔ وہاں پر ہمارا بڑا مکان تھا۔ میرے دو بھائی زمینداری کرتے تھے اور مال مویشی رکھتے تھے۔ پھر سیلاب آگیا اور ہم تینوں بھائیوں کو وہاں سے نکلنا پڑا۔‘

انھوں نے بتایا کہ انھوں نے اپنی جمع پونجی سے گلگت شہر کی درکوت کالونی میں مکان خرید لیا مگر ان کے دونوں بھائیوں کی مالی حالت خستہ تھی اس لیے وہ کرائے کے مکانوں میں رہتے ہیں اور اب راج مزدوری کرتے ہیں۔

’وہاں گاؤں میں لسّی ،گھی ہوتا تھا۔ وہاں مالی تنگی نہیں تھا لیکن یہاں شہر میں زندگی بڑی مشکل ہے۔ بس گزارا کرتے ہیں۔‘

حکام کہتے ہیں کہ صرف وادی درکوت سے حالیہ برسوں میں سو سے زیادہ خاندانوں نے نقل مکانی کی ہے۔ گلگت بلتستان کی کئی اور وادیوں سے بھی قدرتی آفتوں کی وجہ سے لوگوں کو نقل مکانی کرنا پڑی ہے مگر اسکے اعدادوشمار موجود نہیں۔

Image caption حکام کہتے ہیں کہ صرف وادی درکوت سے حالیہ برسوں میں سو سے زیادہ خاندانوں نے نقل مکانی کی ہے

گلگت بلتستان دنیا کے چند بلند ترین مقامات میں سے ایک ہے جو ہمالیہ، ہندوکش اور قراقرم کے پہاڑی سلسلوں کی آغوش میں واقع ہے۔ یہاں ہزاروں گلیشئرز ہیں جو پاکستان کے لیے پانی کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔

ماہرین کے مطابق موسمیاتی تبدیلیوں کے نتیجے میں فطری توازن میں جو بگاڑ پیدا ہو رہا ہے اس سے شدید بارشیں اور سیلاب پہلے سے زیادہ اور شدت سے آرہے ہیں اور اس کا پہلا شکار یہاں کے لوگ بنتے ہیں۔

عالمی ادارے ڈبلیو ڈبلیو ایف کے اہلکار بابر خان نے بی بی سی کو بتایا کہ کم و بیش ایک عشرے سے ان سیلابوں کی تعداد بہت حد تک بڑھ گئی ہے۔ ’برفباری کے موسم میں بڑی تبدیلی آئی ہے۔ پہلے عام طور پر برفباری نومبر، دسمبر، جنوری میں ہوا کرتی تھی مگر اب وہ برف فروری اور مارچ کے مہینے میں ہوتی ہے اور درجہ حرارت میں تھوڑے سے اضافے سے یہ برف پگھلنے لگتی ہے اور اس سے بے موسمی سیلاب آتے ہیں جس سے تباہی ہوتی ہے۔‘

گلگت بلتستان کی حکومت تسلیم کرتی ہے کہ موسمیاتی تبدیلیوں کے نتیجے میں علاقے میں قدرتی آفتوں کی تعداد بھی بڑھی ہے اور ان کی شدت میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

گلگت بلتستان کے ماحولیاتی تحفظ کے سرکاری ادارے کے سربراہ شہزاد شگری نے بی بی سی کو بتایا کہ ’جو ہمارا گلگلت بلتستان کا انوائرنمینٹل پروٹیکشن ایکٹ ہے جو اسمبلی میں پیش ہونے جارہا ہے اس میں موسمیاتی تبدیلیوں کو ایک الگ سبجیکٹ کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔‘

Image caption ڈبلیو ڈبلیو ایف کے اہلکار بابر خان نے بتایا کہ کم و بیش ایک عشرے سے ان سیلابوں کی تعداد بہت حد تک بڑھ گئی ہے۔

انھوں نے کہا کہ مقامی حکومت موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات سے دو طرح سے نمٹنے کی کوشش کر رہی ہے۔ ’ایک تو ڈزاسٹر مینجمنٹ ہے جو آفات کے بعد ہوگا اور دوسرا ان آفتوں کے خطرے کو کم کرنا ہے کہ یعنی ہم ان سے بچ کیسے سکتے ہیں۔ اسکے لیے ہم خطرے سے دوچار آبادیوں کا سروے بھی کررہے ہیں۔‘

گلگت بلتستان میں موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات سے نمٹنے کے لیے پانچ منصوبے تیار کیے گئے ہیں جن کی فنڈنگ کے لیے عالمی برادری سے رجوع کیا جائے گا۔

’یہ دس کروڑ ڈالر سے زیادہ کی مالیت کے منصوبے ہیں اور ہمیں امید ہے کہ ان میں سے تین چار منصوبے منظور ہوجائیں گے اور اس میں ہم کوشش کررہے ہیں کہ لوگوں کو سستے نرخوں پر پن بجلی فراہم کریں اور اس کی بنیاد پر ہم ان سے معاہدہ کریں کہ وہ مزید درخت لگائیں اور قدرتی جنگلات کی خود حفاظت کریں۔‘

پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے دس ملکوں میں سے ایک ہے اور وہ ان تبدیلیوں کے اثرات سے نمٹنے کے لیے مالی اور تیکنیکی مدد کی خاطر ترقی یافتہ ملکوں کی طرف دیکھ رہا ہے۔

اسی بارے میں