منیٰ میں پاکستانی ہلاکتوں کی تعداد 36 ہوگئی، ’85 لاپتہ‘

Image caption سعودی حکام کی جانب سے تاحال بھگدڑ میں ہلاک ہونے والے 769 افراد کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی ہے

سعودی عرب میں حج کے دوران مچنے والی بھگدڑ میں ہلاک ہونے والے افراد کی شناخت کا عمل جاری ہے اور حادثے میں مزید 18 پاکستانیوں کی ہلاکت کی تصدیق کر دی گئی ہے۔

پاکستان کی وزارتِ مذہبی امور کے مطابق اب منیٰ میں جمعرات کو پیش آنے والے حادثے میں ہلاک ہونے والے پاکستانی حاجیوں کی تعداد 36 تک پہنچ گئی ہے۔

وزیر مذہبی امور سردار محمد یوسف نے سرکاری ٹی وی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ تاحال 85 پاکستانی حاجی لاپتہ ہیں جن کی تلاش کا کام جاری ہے۔

وزارتِ مذہبی امور کی ویب سائٹ پر موجود فہرست کے مطابق ہلاک شدگان میں 13 خواتین اور 23 مرد شامل ہیں۔

منیٰ میں ہلاکتوں پر ایران کی سعودی عرب پر شدید تنقید جاری

وزارت کا یہ بھی کہنا ہے کہ حادثے میں 35 پاکستانی زخمی بھی ہوئے تھے جن میں سے آٹھ تاحال مختلف ہسپتالوں میں زیرِ علاج ہیں جبکہ باقی کو طبی امداد کے بعد فارغ کر دیا گیا تھا۔

جن مزید 18 پاکستانی ہلاک شدگان کی شناخت ظاہر کی گئی ہے ان میں اسلام احمد، بشریٰ بی بی، محمد حسرت، عظیم خان، محمد ادریس، عامر محمد ملوک، گل شہناز، نجمہ، نور محمد، محمد اسلم، مدینہ بی بی، توصیف اختر، محمد اسماعیل خان، بی بی زارا، عبدالاحد، حاجی عباس خان، تلمیز خان، سراج احمد سراج، میاں محمد ریاض، عارف، عزیز مائی، بی بی شاکرہ، آصف خان، محمد ابراہیم خان اور محمد حسن خان شامل ہیں۔

وزارت مذہبی امور کے مطابق مزید شناخت ہونے والے ان افراد میں سے دو کا تعلق لاہور اور ایک کا جھنگ سے ہے تاہم یہ نہیں بتایا گیا کہ دیگر افراد کا تعلق ملک کے کن علاقوں سے ہے۔

سعودی حکام کی جانب سے تاحال ہلاک ہونے والے 769 افراد کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی ہے تاہم مختلف ممالک اس بارے میں اعدادوشمار جاری کر رہے ہیں۔

پاکستانی حکام نے ابتدائی طور پر منیٰ میں بھگدڑ کے بعد 236 افراد کے لاپتہ ہونے کی تصدیق کی تھی اور ریڈیو پاکستان کے مطابق سعودی عرب میں تعینات پاکستانی سفیر منظور الحق کا کہنا ہے کہ اتوار تک ان میں سے 135 سے رابطہ ہوگیا ہے اور وہ بخیریت ہیں۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

منظور الحق نے اس سے قبل بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ حج میں اکثر لوگ اپنےعزیزوں سے بچھڑ جاتے ہیں اس لیے ضروری نہیں ہے کہ لاپتہ افراد منیٰ کے سانحے سے متاثر ہوئے ہوں۔

ان کا کہنا تھا کہ سفارت خانے کا عملہ مردہ خانوں کا دورہ کر کے مرنے والوں کی شناخت کی تصدیق کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

پاکستانی سفیر نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ تمام صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہیں اور مسلسل سعودی حکام سے رابطے میں ہیں۔

اسی بارے میں