حکومت مشرف کے سہولت کاروں کے خلاف تحقیقات پر تیار

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مشرف کے سہولت کاروں میں سابق وزیرِ اعظم شوکت عزیز بھی شامل ہیں

پاکستان کی وفاقی حکومت نے کہا ہے کہ وہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے میں اُن کے سہولت کاروں کے خلاف تفتیش کرنے کو تیار ہے۔

سابق فوجی صدر کے خلاف کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت نے تین نومبر سنہ 2007 میں ملک میں ایمرجنسی کے نفاذ میں معاونت کرنے پر اُس وقت کے وزیر اعظم شوکت عزیز، وزیر قانون زاہد حامد اور پاکستان کے چیف جسٹس عبدالحمید ڈوگر کے خلاف بھی کارروائی کا حکم دیا تھا۔

زاہد حامد موجودہ حکومت میں بھی وزیر کے عہدے پر فائز تھے تاہم خصوصی عدالت کے اس فیصلے کے بعد وہ اس عہدے سے علیحدہ ہوگئے تھے۔

خصوصی عدالت کے اس فیصلے کے خلاف ان تینوں افراد نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواستیں دائر کر رکھی ہیں۔

جسٹس نور الحق قریشی کی سربراہی میں اسلام آباد ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے ان درخواستوں کی سماعت کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سابق فوجی صدر کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے کی سماعت بدھ کو ہو گی

ایڈیشنل اٹارنی جنرل عفنان کریم کنڈی نے عدالت کو بتایا کہ حکومت آئین شکنی کے مقدمے میں خصوصی عدالت کے فیصلے کی روشنی میں ان تینوں افراد کے خلاف تحقیقات کرنے کو تیار ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ درخواست گزاروں کو چاہیے کہ وہ تفتیش میں شامل ہوجائیں جس پر درخواست گزاروں کے وکلا کا کہنا تھا کہ اگر خصوصی عدالت اُن کے موکلوں کے خلاف دیے گئے ریمارکس حذف کر دے تو وہ تفتیش میں شامل ہونے کو تیار ہیں۔

ایک اور درخواست گزار توفیق آصف نے کہا کہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے کی کارروائی کو جاری رکھا جائے جبکہ اُن کے سہولت کاروں کے خلاف کارروائی کو الگ کر دیا جائے۔

عدالت نے درخواست گزار سے استفسار کیا کہ وہ تو اس میں متاثرہ فریق نہیں ہیں تو پھر کیوں اس پر اصرار کر رہے ہیں جس پر توفیق آصف کا کہنا تھا کہ اُن کی درخواست پر ہی پرویز مشرف کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے کی کارروائی شروع کی گئی ہے۔

پرویز مشرف کے وکیل فروغ نسیم نے کہا کہ اُنھیں اس مقدمے کی تیاری کے لیے کچھ وقت دیا جائے جس پر عدالت نے ان درخواستوں کی سماعت 19 اکتوبر تک ملتوی کر دی۔

دوسری جانب سابق فوجی صدر کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے کی سماعت بدھ کو خصوصی عدالت میں ہوگی۔

اسی بارے میں