’افغان مصالحتی عمل بحال کرنے کی کوشش کر رہے ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption نواز شریف طالبان اور افغان حکومت کے مابین مزاکرات کی بحالی کے خواہشمند ہیں

پاکستان کے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ ان کی حکومت افغانستان میں 14 سال سے جاری جنگ کے خاتمے خواہاں ہے اور اس کی خواہش ہے کہ طالبان اور افغان حکومت کے مابین امن مذاکرات جلد بحال ہوں۔

سنیچر کو ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے وزیراعظم نواز شریف کا کہنا تھا کہ پاکستان افغان حکام اور طالبان کے درمیان مذاکرات کے انعقاد کے لیے سہولت کا کا کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔

افغان مصالحتی عمل موخر ہوا ہے ختم نہیں: خواجہ آصف

ملا اختر منصور دھیمے مزاج کے مالک اور مذاکرات کے حامی

پاکستان کے وزیراعظم کے بیان کے حوالے سے افغان حکومت کی جانب سے ابھی تک کوئی ردِ عمل سامنے نہیں آیا ہے۔

واضح رہے کے پاکستان پہلے بھی دونوں فریقوں کو مذاکرات کی میز پر لانے کے لیے سہولت کار کا کردار ادا کر چکا ہے۔ افغان حکام اور طالبان کے درمیان پاکستان میں ہونے والے مذاکرات رواں برس اس وقت ختم ہوگئے تھے جب طالبان لیڈر ملا عمر کی موت کی خبریں سامنے آئی تھیں۔

لاہور سے ٹی وی پر نشر ہونے والے اپنے بیان میں میاں نواز شریف کا کہنا تھا کہ ’ہم امن کوششوں کو دوبارہ شروع کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور اللہ سے دعا کر رہے ہیں کہ ہماری کوششیں کامیاب ہوں۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’مذاکرات کے دوسرے دور سے قبل ملا عمر کی موت کت خبر جاری نہیں کی جانی چاہیے تھی۔ مجھے نہیں معلوم کہ ملا عمر کی موت کی خبر کس نے جاری کی یہ ایک معمہ ہے۔ یہ خبر مذاکرات سے دو دن قبل جاری کی گئی۔‘

خیال رہے کہ مذاکرات کے خاتمے کے بعد سے طالبان کی کارروائیوں میں تیزی آئی ہے اور حالیہ دنوں میں طالبان قندوز پر قبضہ کرنے میں بھی کامیاب ہوگئے تھے جو سنہ 2001 کے بعد سے ان کی سب سے بڑی کامیابی بتائی جاتی ہے۔

اسی بارے میں