بلوچستان میں تین پولیس اہلکار ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بلوچستان میں 2006ء سے اب تک 5 سو 24سے زائد پولیس اہلکار ہلاک ہوئے ہیں: فائل فوٹو

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں تشدد کے دو مختلف واقعات میں تین پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں۔

اہلکاروں کی ہلاکت کے واقعات کوئٹہ اور افغانستان سے متصل سرحدی شہر چمن میں پیش آئے۔

ان میں سے دو پولیس اہلکاروں کو چمن میں نشانہ بنایا گیا۔

چمن میں انتظامیہ کے مطابق مقامی پولیس کے دو اہلکار بوغرہ روڈ پر معمول کی گشت پر تھے جہاں نامعلوم مسلح افراد نے ان پر حملہ کیا۔

حملے میں دونوں پولیس اہلکار ہلاک ہوگئے جبکہ اس حملے میں ایک راہگیر زخمی بھی ہوا۔

تیسرے پولیس اہلکار کی ہلاکت کا واقعہ کوئٹہ شہر میں سریاب کے علاقے میں پیش آیا۔

نیوسریاب پولیس سٹیشن کے ایک اہلکار نے بتایا کہ ہلاک ہونے والا اہلکار بلوچستان کانسٹیبلری کا ہیڈ کانسٹیبل تھا۔

پولیس اہلکار نے بتایا کہ نامعلوم مسلح افراد نے بلوچستان کانسٹیبلری کے ہیڈ کانسٹیبل کو غلام رسول مینگل روڑ پر نشانہ بنایا۔

چمن اور کوئٹہ میں پولیس اہلکاروں کو ہلاک کرنے کا محرک معلوم نہیں ہو سکا اور نہ ہی تاحال کسی نے ان واقعات کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

بلوچستان میں حالات خراب ہونے کےبعد سے پولیس اہلکار بھی ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنتے رہے ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق بلوچستان میں 2006ء سے اب تک 5 سو 24سے زائد پولیس اہلکار ہلاک ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں