بلوچستان میں امام بارگاہ میں خودکش بم دھماکہ، نو ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption لیویز ذرائع کے مطابق خودکش حملے میں سات افراد زخمی بھی ہوئے ہیں

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے ضلع کچھی میں خودکش بم دھماکے میں کم ازکم نو افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

لیویز فورس کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ دھماکہ تحصیل بھاگ کے علاقے چھلگری کی امام بارگاہ میں مغرب کی نماز کے دوران ہوا۔

انھوں نے بتایا کہ خودکش حملہ آور اس وقت امام بارگاہ میں داخل ہوا جب وہاں خواتین داخل ہو رہی تھیں اور اس نے خود کو اڑا لیا۔

اب تک حکام نے نو ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے جبکہ دس زخمیوں کو قریبی ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

وزیرداخلہ بلوچستان سرفراز بگٹی نے بی بی سی کو بتایا کہ ہلاک اور زخمی ہونے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔

یہ بلوچستان میں رواں ہفتے کے دوران ہونے والا دوسرا دھماکہ ہے۔ اس سے قبل کوئٹہ میں مسافر بس میں دھماکے کے نتیجے میں 11 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

لیویز فورس کےاہلکار نے بتایا کہ دھماکے کی تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ خودکش حملہ آور کا سر مل گیا ہے جسے تحقیقاتی اداروں نے تحویل میں لے لیا ہے۔

اہلکار نے ابتدائی تحقیق کے حوالے سے بتایا کہ خودکش حملہ آور نوجوان لڑکا تھا۔

چھلگری کوئٹہ کے جنوب مشرق میں اندزاً تین سو کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے اور یہ اس علاقے میں اس نوعیت کا پہلا واقعہ ہے۔

اس سے قبل اسی ضلع سے متصل جھل مگسی کے علاقے گنداوہ میں 2005ء درگاہ فتح پورکے اندر عرس کے موقع بم دھماکہ ہوا تھاجس میں 40 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔

خیال رہے کہ ملک بھر میں محرم الحرام کے موقعے پر سکیورٹی کے خصوصی اقدامات کیے گئے ہیں۔

اسی بارے میں