لاہور میں پی ٹی آئی اور نواز لیگ کے کارکنوں میں تصادم، دو ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ڈی آئی جی آپریشنز اشرف حیدر نے پاکستان تحریک انصاف کی قیادت کو واقعے کی غیرجانبدارنہ تحقیقات اور ملوث افراد کی جلد گرفتاری کی یقین دہانی کروائی

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر لاہور میں بلدیاتی انتخابات کی مہم کے دوران حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ ن اور پاکستان تحریک انصاف کے کارکنوں کے درمیان تصادم میں دو افراد ہلاک جبکہ سات زخمی ہوگئے ہیں۔

یہ واقعہ لاہور کے علاقے یکی گیٹ میں پیش آیا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والوں کا تعلق پاکستان تحریک انصاف سے ہے۔

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ واقعے میں نامزد مرکزی ملزم اللہ دتہ کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

یہ تصادم رات ساڑھے گیارہ بجے کے قریب اس وقت پیش آیا جب علاقے میں ایک دوسرے کے قریب ہی واقع دونوں جماعتوں کے امیداوروں کے انتخابی دفاتر کے باہر کارکنوں کے درمیان ایک دوسرے کے خلاف نعرے بازی کا سلسلہ شروع ہوا۔

نعرے بازی سے تلخی اتنی بڑھی کہ نوبت فائرنگ تک جا پہنچی۔ پولیس حکام کے مطابق فائرنگ کےنتیجے میں دوافراد ہلاک جبکہ سات زخمی ہوگئے ۔

واقعے کی اطلاع ملتے ہی پاکستان تحریک انصاف پنجاب اور لاہور کی قیادت موقعے پر پہنچ گئی اور زخمی کارکنوں کو ہسپتال منتقل کیا۔

اس موقعے پر تحریک انصاف کے رہنماوں کا کہنا تھا کہ صوبہ پنجاب پولیس سٹیٹ بن چکا ہے جہاں عوام کی جان و مال محفوظ نہیں۔ پی ٹی آئی کے رہنماوں نے واقعے میں ملوث افراد کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا۔

واقعے کا مقدمہ تحریک انصاف کے مقامی رہنما کی مدعیت میں تھانہ یکی ٹاؤن میں درج کر لیا گیا ہے۔ اس مقدمے میں مسلم لیگ نواز کے کارکنوں کو نامزد کیا گیا ہے۔ ایف آئی آر میں قتل اقدام قتل خوف و ہراس پھیلانے اور دہشتگردی کی دفعات شامل کی گئی ہیں۔

ڈی آئی جی آپریشنز اشرف حیدر نے پاکستان تحریک انصاف کی قیادت کو واقعے کی غیرجانبدارنہ تحقیقات اور ملوث افراد کی جلد گرفتاری کی یقین دہانی کروائی۔

حیدر اشرف کا کہنا ہے کہ پولیس نے ایف آئی آر میں نامزد مرکزی ملزم اللہ دتہ کو گرفتار کرلیا ہے جبکہ مزید سات مشتبہ افراد کو بھی تفتیش کے لیے حراست میں لیا گیا ہے۔

اسی بارے میں