’20 ہلاکتوں کی تصدیق، ملبے تلے دبے افراد کی تلاش جاری‘

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں بدھ کی رات منہدم ہونے والے کارخانے کے ملبے تلے دبے افراد کو نکالنے کی کارروائیاں جمعرات کی رات کو بھی جاری ہیں۔

ریسکیو 1122 کے ڈائریکٹر جنرل ارشد ضیا نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ اس حادثے میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 20 ہوگئی ہے جبکہ خدشہ ہے کہ متعدد افراد اب بھی ملبے تلے دبے ہوئے ہیں۔

ملبے تلے دبے افراد کو نکالنے کی کوششیں جاری: تصاویر

لاہور میں کارخانہ منہدم ہونے سے ہلاکتیں: تصاویر

ریسکیو 1122 کے ایک اہلکار کے مطابق ملبے کو احتیاط سے ہٹایا جا رہا ہے کیونکہ اب بھی اس کے نیچے متعدد افراد دبے ہوئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption حادثے کے بعد لاہور کے سروسز، جناح اور شریف میڈیکل سٹی میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی

انھوں نے کہا ہے کہ اب تک تقریباً عمارت کی دو منزلوں کے ملبے کو ہٹایا جا چکا ہے جبکہ عمارت کے ملبے کو ہٹانے میں مزید کئی گھنٹے درکار ہیں۔

یہ واقعہ بدھ کو شہر کے نواح میں واقع صنعتی علاقے سندر انڈسٹریل سٹیٹ میں پیش آیا تھا جب چار منزلہ کارخانے کی پہلے چھت اور پھر پوری عمارت منہدم ہوگئی تھی۔

جائے وقوعہ پر امدادی سرگرمیوں میں 400 سے زائد افراد حصہ لے رہے ہیں جن میں ریسکیو 1122، پاک فوج، ایدھی فاؤنڈیشن کے علاوہ فلاح انسانیت فاؤنڈیشن سمیت متعدد تنظیموں کے کارکنان شامل ہیں۔

پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر نے بی بی سی کو بتایا کہ حادثے کے بعد اب تک 103 افراد کو ملبے میں سے نکالا جا چکا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بھاری مشینری کی مدد سے عمارت کی اوپری منزل کا ملبہ ہٹایا جا رہا ہے

لاہور کے ضلعی رابطہ افسر کیپٹن (ر) عثمان نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اب بھی ملبے تلے دبے لوگوں کی صحیح تعداد کے بارے حتمی طور پر کچھ نہیں کہا جا سکتا تاہم اندازہ ہے کہ مزید 50 سے 60 لوگ اب بھی دبے ہوئے ہیں۔

اس سے قبل آئی ایس پی آر نے حادثے کے وقت عمارت میں موجود افراد کی تعداد اندازاً 100 سے 150 کے درمیان بتائی تھی۔

موقع پر موجود ریسکیو 1122 کے ایک اہلکار نے بتایا کہ چند گھنٹے قبل ملبے سے آوازیں سنے جانے کی اطلاعات کے بعد ملبہ ہٹانے کا عمل روکا گیا تاہم اب دوبارہ بھاری مشینری کی مدد سے عمارت کی اوپری منزل کا ملبہ ہٹایا جا رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آئی ایس پی آر نے بی بی سی کو بتایا کہ حادثے کے بعد اب تک 103 افراد کو ملبے میں سے نکالا جا چکا ہے

اس سے قبل ریسکیو 1122 کے اہلکار نعیم مرتضیٰ نے بی بی سی کو بتایا کہ چھ مقامات سے عمارت کے اندر جانے کے لیے مشینری کے ذریعے راستہ بنایا گیا ہے۔ انھوں نے بتایا کہ ملبے کے نیچے موجود بہت سے افراد اب بھی زندہ ہیں۔

حادثے کے بعد لاہور کے سروسز، جناح اور شریف میڈیکل سٹی میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے شریف میڈیکل سٹی اور جناح ہسپتال میں موجود زخمیوں کی عیادت کی۔ انھوں نے جائے حادثہ کا دورہ بھی کیا اور اس واقعے کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حادثے میں ہلاک اور زخمی ہونے والوں کے لواحقین جائے حادثہ پر جمع تھے

ریسکیو کے اہلکار کا کہنا ہے کہ مذکورہ عمارت کی دو منزلوں میں شاپنگ بیگ بنانے کا کارخانہ قائم تھا اور چوتھی منزل کی تعمیر جاری تھی۔

خیال کیا جاتا ہے کہ حال ہی میں آنے والے زلزلے سے اس عمارت کو جزوی نقصان بھی پہنچا تھا۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

خیال رہے کہ لاہور میں ماضی میں بھی بوسیدہ رہائشی اور صنعتی عمارتوں کے انہدام کے واقعات میں درجنوں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں