جہلم میں توہینِ مذہب کے مبینہ واقعے کے بعد کشیدگی، فوج تعینات

Image caption جمعے کی شب مشتعل ہجوم نے گتّے کی ایک فیکڑی پر حملہ کرکے اسے آگ لگا دی تھی

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر جہلم میں مبینہ توہینِ مذہب کے واقعے کے بعد کشیدگی کی فضا ہے جبکہ حکومت نے امن و امان برقرار رکھنے کے لیے فوج تعینات کرنے کا حکم دیا ہے۔

جہلم میں جمعے کی شب مشتعل ہجوم نے مبینہ توہینِ مذہب کے الزام کے بعد ایک فیکڑی پر حملہ کر دیا تھا جہاں وہ شخص ملازمت کرتا ہے جس پر وہاں کے ہی ایک ڈرائیور نے قرآن کو مبینہ طور پر نذرِ آتش کرنے کا الزام عائد کیا تھا۔

قرآن کی مبینہ بے حرمتی کے الزام میں عیسائی جوڑا قتل

وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے جہلم واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے شہر میں امن و امان قائم کرنے کے لیے فوج کو صوبائی حکومت کے مدد کرنے کا حکم دیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ کسی کو بھی قانون ہاتھ میں لینے کے اجازت نہیں دی جائے گی۔

جہلم کے ضلعی پولیس افسر مجاہد اکبر خان نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ الزام کے بعد احمدی برادری سے تعلق رکھنے والے ملازم قمر احمد طاہر کو پولیس نے حراست میں لیا تھا اور ان کے خلاف توہینِ مذہب کا مقدمہ درج کیا جا چکا تھا۔

تاہم جماعت احمدیہ نے ایک بیان میں الزام عائد کیا کہ ’ایک منصوبے کے تحت فیکٹری کو آگ لگا کر احمدیوں کو زندہ جلانے کی عمداً کوشش کی گئی۔ کسی شخص نے اپنے مذموم مقاصد کے لیے دشمنی کی آگ کے تحت قرآن کریم کی مبینہ بے حرمتی کا شر انگیز الزام لگایا ہے۔‘

جماعت احمدیہ کے ترجمان سلیم الدین نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے الزام لگایا بتایا کہ ’مساجد سے لاؤڈ سپیکرز پر اعلان کر کے مشتعل ہجوم کو اکھٹا کیا گیا۔ جس نے فیکٹر ی پر پتھراؤ کیا اور توڑ پھوڑ کرنے کے بعد فیکٹری کو آگ لگا دی۔‘

ڈی پی او مجاہد اکبر خان نے بی بی سی کو بتایا کہ فیکڑی پر ہجوم کے حملے کے بعد کی اطلاع کے بعد فیکڑی کے اندر موجود قریباً 15 سے 16 افراد کو بچا لیا گیا تھا۔ یہ افراد ملازمین اور ان کے خاندان کے افراد تھے جو اس فیکٹری احاطے کے اندر ہی مقیم تھے اور ان سب کا تعلق احمدی برادری سے ہے۔

Image caption پولیس کے مطابق توہینِ مذہب کا مبینہ ملزم پہلے سے ہی پولیس کی حراست میں تھا

ڈی پی او مجاہد اکبر خان کے مطابق اس واقعے میں کوئی ہلاک یا زخمی نہیں ہوا تاہم فیکڑی میں آگ لگنے سے بڑے پیمانے پر نقصان ہوا ہے۔ ان کے بقول آگ سے ہونے والے نقصانات کا اندازہ لگایا جا رہا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ مشتعل ہجوم کے خلاف بھی مقدمہ درج کر دیا گیا ہے جس میں کم سے کم ایک ہزار افراد شامل تھے اور مزید کارروائی کی جا رہی ہے۔

ڈی پی او کا کہنا تھا کہ اس وقت زیادہ توجہ قیامِ امن پر ہے۔ انھوں نے بتایا کہ علاقے میں موجود احمدی برداری کے افراد کی سکیورٹی کے لیے پولیس اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔

فیکٹری کے مالکان کا تعلق جماعت احمدیہ سے ہے اور ملازمین کی اکثریت بھی احمدی جماعت سے تعلق رکھتے ہیں۔

آگ لگنے سے فیکٹری کا 70 فیصد سے زائد حصہ جل کر تباہ ہو گیا ہے جبکہ فیکٹری کے احاطے میں موجود آٹھ متعدد گاڑیاں بھی جلا دی گئیں۔

Image caption آگ لگنے سے فیکٹری کا 70 فیصد سے زائد حصہ جل کر تباہ ہو گیا ہے

اسی بارے میں