’افغانستان کی درخواست پر امن مذاکرات میں اپنا کردار ادا کریں گے‘

Image caption دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کشیدہ نہیں ہیں اور پاکستان نے افغانستان کے کہنے پر اُس کی مدد کی ہے: طارق فاطمی

پاکستان کا کہنا ہے کہ اگر افغانستان ملک میں قیام امن کے لیے تعطل کے شکار مذاکرتی عمل کو دوبارہ شروع کرنا چاہتا ہے تو پاکستان مصالحتی عمل میں معاون کا کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔

سنیچر کو اسلام آباد میں وزیراعظم نواز شریف کے معاونِ خصوصی طارق فاطمی نے بتایا کہ پاکستان افغانستان میں حقیقی امن و استحکام کا خواہاں ہے اور آئندہ ہفتے اسلام آباد میں منعقد ہونے والی ہارٹ آف ایشیا کانفرنس میں خطے کے دیگر ممالک کے ساتھ انھی امور پر بات کی جائے گی۔

’بھارتی وزیر خارجہ اور افغان صدر کی آمد کی تصدیق ہونا باقی ہے‘

پاکستان کی افغانستان پر کانفرنس میں بھارت کو دعوت

اس قبل اسلام آباد میں وزیراعظم نواز شریف کے زیر صدارت اجلاس میں ہارٹ آف ایشیا کانفرنس کے ایجنڈے پر بات کی گئی۔ اس اجلاس میں پاکستان کے قومی سلامتی کے مشیر ناصر جنجوعہ، ڈی جی آئی ایس آئی، مشیر خارجہ سرتاج عزیز اور معاونِ خصوصی طارق فاطمی شریک تھے۔

اس اجلاس میں ملک سلامتی اور خطے میں استحکام سے متعلق امور کا جائزہ لیا گیا۔

طارق فاطمی نے بتایا کہ اس کانفرنس کا اہم مقصد افغانستان میں امن قائم کرنا ہے اور اسی سلسلے میں خطے کے دیگر ممالک کو مدعو کیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ آٹھ نومبر سے اسلام آباد میں شروع ہونے والی دو روزہ کانفرنس میں کا افتتاح پروگرام کے تحت افغان صدر اشرف غنی اور وزیراعظم نواز شریف نے کرنا ہے لیکن وہ افغان صدر کی جانب سے کانفرنس میں شرکت کے لیے تصدیق کے منتظر ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پیرس میں ماحولیاتی کانفرنس کے دوران افغان صدر اشرف غنی اور وزیراعظم نواز شریف کے درمیان ملاقات ہوئی تھی

پاکستان نے اس کانفرنس میں بھارت کو بھی مدعو کیا ہے لیکن دفتر خارجہ کے ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ ’بھارتی حکام نے ہمیں وزیر خارجہ سشما سوراج کی آمد کے بارے باقاعدہ مطلع نہیں کیا ہے۔‘

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ترجمان قاضی خلیل اللہ نے کہا کہ ’افغان صدر اشرف غنی اور بھارتی وزیر خارجہ کی پاکستان آمد کے حوالے باقاعدہ طور پر آگاہ نہیں کیا گیا ہے۔‘

معاونِ خصوصی طارق فاطمی نے کہا کہ پاکستان نے ماضی میں بھی افغانستان میں طالبان سے مذاکرات میں معاون کا کردار ادا کیا ہے اور ہم اب بھی سہولت کار کا کردار ادا کرنے کو تیار ہیں۔

گذشتہ کچھ ماہ میں افغانستان اور پاکستان کے درمیان کشیدگی کے بعد اس کانفرنس میں پاکستان کے موقف کے بارے میں طارق فاطمی کا کہنا تھا کہ ’دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کشیدہ نہیں ہیں اور پاکستان نے افغانستان کے کہنے پر اُس کی مدد کی ہے۔‘

’افغانستان نے پاکستان سے مصالحتی عمل شروع کروانے کی درخواست کی تھی اور پاکستان افغانستان کی قیادت میں شروع ہونے والے مصالحتی عمل میں معاون کا کردار ادا کرنا چاہتا ہے۔‘

افغانستان کی حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکرات کے پہلے دو ادوار پاکستان میں ہوئے ہیں لیکن افغان طالبان کے رہنما ملا عمر کی ہلاکت کی خبر آنے کے بعد سے افغان حکومت اور طالبان کے مابین مذاکراتی عمل تعطل کا شکار ہے۔

یاد رہے کہ پیرس میں ماحولیاتی کانفرنس کے دوران افغان صدر اشرف غنی اور وزیراعظم نواز شریف کے درمیان ملاقات ہوئی تھی۔ جس میں دونوں رہنماؤں نے افغانستان میں قیام امن کے لیے مذاکراتی عمل دوبارہ شروع کرنے پر زور دیا تھا۔

اسی بارے میں