مری معاہدے کے تحت اب ثنا اللہ زہری وزیراعلیٰ بلوچستان

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ’بلوچستان میرے دل کے قریب ہے اور مجھے توقع ہے کہ ثنا اﷲ زہری صوبے میں امن واستحکام کویقینی بنائیں گے‘

وزیراعظم پاکستان نواز شریف نے نواب ثنا اللہ زہری کو بلوچستان کا نیا وزیراعلیٰ نامزد کر دیا ہے۔

وزیراعظم ہاؤس سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق ثنا اللہ زہری کو وزیراعلیٰ بنانے کا فیصلہ مری معاہدے کی روشنی میں کیا گیا۔

کیا ثنا اللہ زہری ناراض بلوچوں کے لیے قابل قبول ہوں گے؟: آڈیو انٹرویو

بلوچستان میں مفاہمتی پالیسی کا مستقبل کیا ہوگا؟ آڈیو انٹرویو

بلوچستان میں وزیر اعلیٰ کی تبدیلی کا امکان؟

وزیراعظم نے امید کا اظہار کیا ہے کہ ثناء اللہ زہری بلوچستان میں قیام امن کو یقینی بنائیں گے۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے صوبہ بلوچستان کے وزیرِ داخلہ میر سرفراز بگٹی نے کہا ہے کہ وزیر اعظم کی سربراہی میں اسلام آباد میں جو اجلاس ہوا اس میں یہ فیصلہ ہوا ہے کہ مری معاہدے کے تحت ڈھائی سال کے لیے آئندہ کا وزیر اعلیٰ مسلم لیگ نواز کے صوبائی صدر اور پارلیمانی رہنما نواب ثنا اللہ زہری ہوں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان کی مخلوط حکومت جن جماعتوں پر مشتمل ہے ان میں کوئی تبدیلی نہیں ہوگی۔

وزیراعظم ہاؤس سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق وزیراعظم نے کہا ’بلوچستان میرے دل کے قریب ہے اور مجھے توقع ہے کہ ثنا اﷲ زہری صوبے میں امن و استحکام کو یقینی بنائیں گے۔‘

بیان کے مطابق وزیر اعظم نے کہا کہ وفاقی حکومت بلوچستان کی ترقی میں مکمل تعاون کرے گی۔

یاد رہے کہ حکومت میں شامل اتحادی جماعتوں نیشنل پارٹی، مسلم لیگ نواز اور پختونخوا ملی عوامی پارٹی نے وزیراعظم نواز شریف کی موجودگی میں ’مری معاہدے‘ پر دستخط کیے تھے۔

اس معاہدے کے تحت ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے رواں برس چار دسمبر کو وزیراعلیٰ بلوچستان کے عہدے سے دستبردار ہو جانا تھا جس کے بعد آئندہ ڈھائی سال کے لیے مسلم لیگ (ن) کے اُمیدوار کو اس عہدے پر فائز کیا جانا ہے۔

اسی بارے میں