’طلبہ نے اپنے عزم سے تاریکی کو شکست دے دی‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc

پشاور میں آرمی پبلک سکول پر حملے کی پہلی برسی کے موقع پر لندن میں پاکستان کے سفارت خانے میں بھی اس حملے میں ہلاک ہونے والے بچوں اور اساتذہ کی یاد میں ایک تقریب منعقد کی گئی۔

اس تقریب میں برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں کے علاوہ برطانوی معاشرے کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

اس موقع پر سفارت خانے کے باہر اس المناک حملے میں ہلاک ہونے والے معصوم بچوں کی یاد میں شمعیں روشن کی گئیں اور تقریب کے شرکاء نے ایک منٹ کی خاموشی بھی اختیار کی۔

برطانیہ میں پاکستان کے سفیر ابن عباس نے اے پی ایس سکول پر حملے میں ہلاک ہونے والے ایک طالب علم حارث نواز کو تمغہ شجاعت دیا جو ان کے بھائی احمد نواز نے وصول کیا۔ احمد نواز خود اس حملے میں شدید زخمی ہو گئے تھے اور وہ علاج کے سلسلے میں برطانیہ میں ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ bbc

ابن عباس نے اے پی ایس کے طالب علموں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ ان کی بے مثال قربانی نے قوم کو جاہلیت کی شدت پسند قوتوں کے خلاف یکجا کر دیا۔

ابن عباس نے طلبہ کے عزم و ہمت کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ اتنے بڑے سانحے سے گزرنے کے باوجود تعلیم کے حصول کے لیے ان کا حوصلہ اور جذبہ برقرار ہے۔

انھوں نے کہا کہ جدید تعلیم کے دشمنوں کو ان بچوں نے اپنے حوصلہ اور ہمت سے شکست دے دی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ان بچوں کا خون رائیگاں نہیں جائے گا اور قوم قائد اعظم محمد علی جناح کے افکار کے حصول تک چین سے نہیں بیٹھے گی۔

اے پی ایس کے طالب علم احمد نواز نے خود پر گزرنے والے غم و الم کی تفصیل بیان کی۔ انھوں نے کہا کہ جسمانی زخم کے علاوہ اس واقعے نے ان کے ذہن اور روح پر بھی زخم چھوڑے ہیں جو شاید کبھی مندمل نہ ہو پائیں۔

اس تقریب میں پاکستان سے آئی ہوئی سینیٹر نجمہ حمید اور رکن قومی اسمبلی طاہرہ اورنگزیب نے بھی شرکت کی۔ .