سعودی عرب نےنہ فوج مانگی، نہ بھیج رہے ہیں: سرتاج عزیز

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مشیرخارجہ کا کہنا تھا کہ ایران سعودی عرب تنازع پر او آئی سی کا اجلاس 16 جنوری کو ہوگا

پاکستان کے وزیر اعظم کے مشیر برائے خارجہ امور سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ سعودی عرب کی قیادت میں دہشت گردی کے خلاف 34 ملکی اتحاد میں نہ تو پاکستان سعودی عرب میں فوج بھجوا رہا ہے اور نہ ہی سعودی عرب نے پاکستان سے زمینی فوج مانگی ہے۔

خارجہ امور کے بارے میں قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی کے اجلاس کو ایران اور سعودی عرب تنازع اور اس کے حل کے لیے پاکستان کے کردار کے بارے میں منگل کو ان کیمرہ بریفنگ دیتے ہوئے سرتاج عزیز کا کہنا تھا کہ پاکستان سعودی عرب کی قیادت میں بننے والے انسداد دہشت گردی اتحاد کا حصہ ہے لیکن کسی ملک میں فوج بھیجنا ہماری خارجہ پالیسی نہیں۔

’فوجی اتحاد میں شامل ہونے کا فیصلہ ملکی مفاد میں کیا‘

پاکستان کی اسلامی ممالک کے اتحاد میں شمولیت کی تصدیق

دہشت گردی کے خلاف 34 اسلامی ممالک کا فوجی اتحاد

اس ان کیمرہ اجلاس میں شامل ایک رکن نے بی بی سی کو بتایا کہ مشیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ایران سعودی عرب تنازع میں پاکستان کسی بھی طور پر اتحاد کا حصہ نہیں ہوگا۔

اُنھوں نے کہا کہ پاکستان سعودی اتحاد میں اپنی زمینی فوج نہیں بھیجے گا تاہم دہشت گردی کے خاتمے کے لیے تربیت، تکنیکی معاونت، معلومات کا تبادلہ اوراسلحہ کی فراہمی میں حصہ لے گا۔

اُنھوں نے کہا کہ ایران سعودی کشیدگی کی وجہ فرقہ ورانہ نہیں ہے بلکہ یہ شام اور یمن کے معاملات پر دونوں ممالک کا الگ الگ نکتہ نظر ہونے کی وجہ سے ہے۔

مشیرخارجہ کا کہنا تھا کہ ایران سعودی عرب تنازع پر او آئی سی کا اجلاس 16 جنوری کو ہوگا اور امید ہے کہ اس اجلاس کے بعد سعودی عرب اور ایران کے درمیان کشیدگی میں کمی آئے گی۔

سرتاج عزیز کا کہنا تھا کہ پاکستان اس اجلاس میں باقاعدہ طور پر اپنا موقف پیش کرے گا۔

وزارتِ خارجہ کے ایک ترجمان کے مطابق سرتاج عزیز نے کمیٹی کو بتایا کہ سعودی عرب پاکستان کا قریبی دوست ہے۔

پاکستان نے اس بات کی توثیق کی کہ سعودی عرب کی علاقائی سالمیت کو کسی بھی خطرے کی صورت میں بہت سخت ردِ عمل ظاہر کیا جائےگا۔

دفترِ خارجہ کے ترجمان نے بتایا کہ پاکستان دہشت گردی سے نمٹنے کی تمام علاقائی اور بین الاقوامی کوششوں کی پختہ عزم کے ساتھ حمایت کرتا ہے اور اسی لیے پاکستان نے نے انسدادِ دہشت گردی کے اتحاد کی تشکیل کو خوش آمدید کہا ہے۔

انھوں نے کہا کہ تعاون کی شکل اور اتحاد کی مختلف سرگرمیوں کے متعلق سعودی عرب میں مستقبل میں ہونے والے مشاورتی اجلاسوں کے بعد ہی فیصلہ کیا جائے گا۔

قائمہ کمیٹی برائے امور خارجہ کے چیئرمین اویس لغاری نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ایران سعودی عرب کشیدگی کے حل کے لیے کوشش کی جاری ہیں۔

ایک سوال پر ان کا کہنا تھا کہ جب اشتعال بڑھ رہا ہو تو اس وقت ثالثی کی بجائے پہلے اس میں کمی کی کوششیں کی جاتی ہیں۔

انھوں نے کہا کہ سعودی قیادت میں بننے والا اتحاد کوئی تحریری نہیں بلکہ مفاہمت پر مبنی ہے۔

اسی بارے میں