پاک بھارت سیکریٹری خارجہ کی ملاقات پر فیصلہ آج متوقع

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان نے پٹھان کوٹ حملے کی تحقیقات کے لیے چھ رکنی کمیٹی تشکیل دے دی ہے جبکہ بھارت کی جانب سے جمعے کے لیے طے شدہ سیکریٹری خارجہ مذاکرات پر حتمی فیصلہ آج متوقع ہے۔

دہلی میں بی بی سی ہندی کے نامہ نگار کے مطابق بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے وزیرِ خارجہ سشما سوراج سے بدھ کی رات ملاقات کی اور پاکستان میں جیشِ محمد کے خلاف ہونے والی کارروائی کا جائزہ لیا۔ تاہم پاک بھارت سیکریٹری خارجہ کی جمعے کو ہونے والی ملاقات کے حوالے سے باضابطہ اعلان آج (جمعرات) قومی سلامتی کے مشیر اجیت دوال کے پیرس سے لوٹنے تک موخر کر دیا گیا ہے۔

پٹھان کوٹ حملہ: کیا ہوا اور اب کیا ہوگا؟ خصوصی ضمیمہ

’پاکستان نے کچھ قدم اٹھائے ہیں، ہمیں انتظار کرنا چاہیے‘

’جب تک تکلیف نہیں پہنچائیں گے، حملے بند نہیں ہوں گے‘

بھارت کو یہ فیصلہ لینا ہے کہ پاکستان کے ساتھ سیکرٹری خارجہ سطح کی بات چیت طے وقت پر ہوگی یا نہیں۔

دونوں ممالک کے خارجہ سیکرٹریوں کی بات چیت کے لیے 15 جنوری کی تاریخ طے پائی گئی تھی۔

خیال رہے کہ گذشتہ روز بھارتی وزیرِ داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا تھا کہ دونوں ملکوں کے خارجہ سیکریٹریوں کے درمیان مجوزہ مذاکرات ہوں گے یا نہیں اس کا فیصلہ مناسب وقت پر کیا جائے گا۔

اس سے قبل پاکستان کے وزیر اعظم نواز شریف نے ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس کے چند ہی گھنٹوں بعد پٹھان کوٹ میں بھارتی فضائیہ کے اڈے پر حملے میں پاکستانی عناصر کے ملوث ہونے کے الزامات کی تحقیقات کے لیے ایک چھ رکنی ٹیم کا اعلان کیا تھا۔

اس کمیٹی میں پولیس کے علاوہ ملٹری انٹیلی جنس اور پاکستانی فوج کے خفیہ ادارے کے اعلیٰ اہلکار بھی شامل ہیں۔

وزیر اعظم ہاؤس میں منعقد ہونے والے ایک اجلاس کے بعد یہ اعلان کیا گیا تھا کہ پٹھان کوٹ پر حملے کے پس منظر میں ہونے والی تحقیقات کے سلسلے میں جیش محمد نامی شدت پسند تنظیم کے متعدد کارکنوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے اور کئی دفاتر کو سیل کردیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پٹھان کوٹ پر حملے کے پس منظر میں ہونے والی تحقیقات کے سلسلے میں جیش محمد نامی شدت پسند تنظیم کے متعدد کارکنوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے

ادھر پاکستان کے مقامی میڈیا میں یہ دعوے کیے جا رہے ہیں کہ مولانا مسعود اظہر کو حفاظتی تحویل میں لے لیا گیا ہے۔

وزیراعظم ہاؤس کے بیان میں یہ نہیں بتایا گیا کہ جیشِ محمد کے سربراہ مولانا مسعود اظہر کو گرفتار کیا گیا ہے یا نہیں۔ جبکہ پریس ٹرسٹ انڈیا کے مطابق بھارتی وزارتِ خارجہ کے ترجمان نے گذشتہ روز صحافیوں سے گفتگو میں بتایا تھا کہ پاکستانی حکومت نے مولانا مسعود اظہر کی گرفتاری کی تصدیق نہیں کی۔

رابطہ کرنے پر بہاولپور کےمتعلقہ تھانے میں ڈیوٹی پر موجود اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ مولانا مسعود اظہر کی گرفتاری اور ان کے دفاتر سیل کیے جانے سے متعلق کسی بھی کارروائی سے لاعلم ہیں۔

اسی بارے میں