پی آئی اے کے آپریشنز بدستور معطل،’ایک ارب 80 کروڑ کا نقصان‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

پاکستان قومی فضائی کمپنی پی آئی اے کی نجکاری کے خلاف ادارے کے ملازمین کی ہڑتال جاری ہے اور اس کے باعث فلائٹ آپریشنز جمعرات کو مسلسل تیسرے دن بھی معطل رہے۔

پی آئی اے ملازمین گزشتہ دو ہفتوں سے احتجاج کر رہے ہیں ان کا احتجاج 20 جنوری کو قومی اسمبلی میں پی آئی اے کی نجکاری کے حوالے سے بل آنے پر شروع ہوا تھا۔

ادارے کے ترجمان دانیال گیلانی کا کہنا ہے کہ ’گیارہ دنوں میں پی آئی اے کو 1 ارب 80 کروڑ کا نقصان ہو چکا ہے۔‘

جمعرات کو انھوں نے یہ بھی بتایا تھا کہ اب پی آئی اے کے اپنے فلیٹ میں شامل تمام طیارے پاکستانی ایئرپورٹس پر کھڑے ہیں اور کوئی بھر پرواز اڑان نہیں بھر رہی۔

اس احتجاج میں دو دن قبل اس وقت شدت آئی تھی جب کراچی میں پی آئی اے کے دو ملازمین دورانِ احتجاج گولیاں لگنے سے ہلاک ہوگئے تھے۔

ملازمین کی جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے ان ہلاکتوں کے لیے رینجرز کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے جبکہ رینجرز حکام اس الزام سے انکار کر رہے ہیں۔

اس معاملے کی تحقیقات کے لیے کراچی میں رینجرز کے ڈائریکٹر جنرل نے ایک تحقیقاتی کمیٹی بھی قائم کی ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

ادھر وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے کہا ہے کہ حکومت پی آئی اے کے مظاہرین کے قاتلوں کی گرفتاری اور انھیں ہر قیمت پر انصاف کے کٹہرے میں لانے کے لیے پرعزم ہے۔

جمعرات کے روز لاہور میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ حکومت معاملے کی اپنی سطح پر تحقیقات کر رہی ہے جبکہ رینجرز کی طرف سے بریگیڈیر سطح کی تحقیقات بھی جاری ہیں۔

ہڑتال اور احتجاج کی وجہ سے ہزاروں مسافروں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے اور جمعرات کو پی آئی اے کی جانب سے اعلان کیا گیا تھا کہ ایسے تمام مسافر جنھوں نے مختلف روٹس پر پی آئی اے کے کنفرم ٹکٹ خرید رکھے ہیں انھیں مختلف فضائی کمپنیوں کے ساتھ معاہدے کے تحت سفر کی سہولت فراہم کی جائے گی۔

پی آئی اے نے مقامی پروازوں کے مسافروں کو ایئربلیو اور شاہین ایئر کی پروازوں میں جگہ دینے کے لیے ان دونوں فضائی کمپنیوں کے ساتھ معاہدہ کیا ہے۔

اس کے علاوہ بین الاقوامی روٹس پر ایئر بلیو، شاہین، اتحاد ایئرویز اور ترکش ایئر ویز پی آئی اے کے مسافروں کو اپنی پروازوں میں جگہ دیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پی آئی اے کے اپنے فلیٹ میں شامل تمام طیارے پاکستانی ایئرپورٹس پر کھڑے ہیں اور کوئی بھر پرواز اڑان نہیں بھر رہی

دوسری جانب وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف نے چیئرمین پی آئی اے ناصر جعفر کا استعفیٰ منظور کر لیا ہے جس کے بعد سیکرٹری ایوی ایشن محمد علی گردیزی کو پی آئی اے کااضافی چارج دیا گیا ہے۔

حکومت نے پی آئی اے میں لازمی سروسز ایکٹ 1952 نافذ کیا ہوا ہے جس کی رو سے کام پر نہ آنے والے ملازمین کا نکالا جا سکتا ہے۔

یہ 2011 کے بعد پہلی بار ہے کہ پی آئی اے کا تمام آپریشن مکمل طور پر معطل ہوا ہے۔

2011 میں یہ آپریشن چار دن بند رہنے کے بعد اُس وقت شروع کیا گیا تھا جب حکومت نے احتجاج کرنے والوں کے تمام مطالبات مان لیے تھے۔

اسی بارے میں