کوہاٹ کے بعد پشاور میں بھی ویلنٹائن ڈے کی مخالفت

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ضلعی ناظم کوہاٹ مولانا نیاز محمد کا کہنا تھا کہ پھول اور کارڈ دینا مناسب نہیں ہے

پشاور میں ضلعی حکومت نے ویلنٹائن ڈے پر پابندی کے لیے قرارداد منظور کر لی ہے جبکہ ضلع کوہاٹ کے ناظم پہلے ہی شہر میں ویلنٹائن ڈے کی تقریبات پر پابندی عائد کر چکے ہیں۔

ضلع کونسل ہال میں منعقد ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کے اجلاس میں جماعت اسلامی کے پارلیمانی رکن خالد وقاص چمکنی کی جانب سے قرارداد پیش کی گئی۔ جس میں کہا گیا ہے کہ ’ایک مخصوص طبقہ ویلنٹائن ڈے کے نام پر یہاں تہذیب اور اقدار کو پامال کر کے بے حیائی اور بے شرمی پھیلانا چاہتا ہے،‘ اس لیے ویلنٹائن ڈے منانے پر پابندی لگائی جائے۔

یہ قرارداد متفقہ طور پر منظور کر دی گئی ہے اور ایسی اطلاعات ہیں کہ انتظامیہ سے کہا گیا ہے کہ اس قرار داد پر عمل درآمد کو یقینی بنایا جائے۔

ضلعی انتظامیہ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ اس پر عمل درآمد ہوتا نظر نہیں آ رہا کیونکہ ویلنٹائن ڈے پر پابندی لگانے کا کوئی قانون موجود نہیں ہے۔

دوسری جانب ضلعی ناظم کوہاٹ مولانا نیاز محمد نے بی بی سی کو بتایا کہ ویلنٹائن ڈے کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے اور یہ غیر شرعی ہے اس لیے اس پر پابندی عائد کی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس موقعے پر لوگوں کو پھول اور کارڈ دینا مناسب نہیں ہے۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ پھول اور کارڈ دینے میں کیا قباحت ہے تو انھوں نے کہا کہ ’پھول اور کارڈ دینے کو ایک خاص دن سے منسوب کرنا مناسب نہیں ہے، اس سے فحاشی اور عریانی پھینلے کا اندیشہ ہے۔‘

اس سوال پر کہ اس سے کیا فحاشی پھیلے گی، تو انھوں نے کہا کہ پابندی اس لیے لگائی گئی ہے کہ اس کی قانون میں کوئی جگہ نہیں ہے۔

ان سے جب پوچھا گیا کہ اس حکم نامے پر اب تک کیا عمل درآمد کیا گیا ہے تو ان کا کہنا تھا کہ عمل درآمد کرانا پولیس کی ذمہ داری ہے۔

مولانا نیاز محمد کا تعلق ضلع کوہاٹ میں جمعیت علمائے اسلام فضل الرحمان گروپ سے ہے۔

کوہاٹ میں ویلنٹائن ڈے پر کارڈ پھول اور تحائف فروخت کرنے والی دوکانوں کی تعداد 30 سے 40 تک بتائی گئی ہے، لیکن مقامی لوگوں کے مطابق ان دوکانوں کے خلاف اب تک کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے۔

کوہاٹ میں بڑی تعداد میں لوگوں کو اس حکم نامے کا علم نہیں تھا، جبکہ ایسے نوجوان بھی تھے جن کا کہنا تھا کہ وہ اپنی زندگی اپنی مرضی سے گزارتے ہیں اس کے لیے انھیں حکومت کے احکامات کی ضرورت نہیں ہے۔

صوبے کے دیگر شہروں میں ویلنٹائن ڈے کے حوالے سے دوکانوں پر کارڈوں اور تحائف کی خرید و فروخت معمول کے مطابق جاری ہے۔

اسی بارے میں