کشمیر: مکانات پر مٹی کے تودے گرنے سے 11 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ PRC AJK
Image caption پولیس کے مطابق ان تمام مقامات پر ریسکیو آپریشن کے بعد ہلاک ہونے والے 11 کی لاشوں کو نکال لیا گیا

پاکستان کے زیرانتظام کشمیر میں حالیہ جاری بارشوں کے باعث مٹی کے تودے گرنے اور ٹریفک حادثات کے دوران 13 افراد ہلاک اور 4 افراد زخمی ہو گئے۔

اس خطے میں قدرتی آفات سے نمٹنے والے ادارے سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق مظفرآباد کے نواحی علاقے سرلی سچہ میں مٹی کے تودہ اور بھاری پتھر مکان پر گرنے سے ایک ہی خاندان کے پانچ افراد ملبے تلے دب کر ہلاک ہو گئے جبکہ ایک چار سالہ بچی زخمی ہوئی۔

سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق جنوبی ضلع باغ کے علاقے اوچھاڑ میں مٹی کا تودہ مکان پر گرنے سے دو افراد ہلاک ہوئے جبکہ تین بچیاں زخمی ہوئیں۔ ضلع حویلی اور عباسپور میں مکان گرنے سے 4 افراد کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔

مظفرآباد میں صحافی اورنگزیب جرال نے بتایا کہ پولیس کے مطابق ان تمام مقامات پر ریسکیو آپریشن کے بعد ہلاک ہونے والے 11 افراد کی لاشوں کو نکال لیا گیا ہے۔ مرنے والوں میں 4 بچے اور دو خواتین بھی شامل ہیں۔

نصف رات کے بعد شروع کی جانے والی امدادی کارروائیوں میں ضلعی انتظامیہ اور پاکستانی فوج کے اہلکاروں سمیت سرکاری و غیر سرکاری ادارے کے رضاکاروں نے حصہ لیا۔

امدادی ادارے پاکستان ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کے مطابق سرلی سچہ نامی علاقے میں رات 10 بجے کے بعد ہونے والی لینڈ سلائلانگ سے 8 مکانات مکمل طور پر تباہ ہوئے ہیں جبکہ 112 مکان خطرے میں ہیں۔ اس کے علاوہ قریبی دیہاتوں سے بھی مکانات کو نقصان پہنچنے کی اطلاع ہے۔

پولیس کے مطابق گذشتہ روز تیز بارش کے دوران سڑک پر پھسلن سے مظفرآباد اور نیلم میں مختلف ٹریفک حادثات بھی پیش آئے جن میں دو افراد ہلاک ہوئے۔

سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق پاکستان کے زیرانتظام کشمیر میں ’حالیہ بارشوں سے مٹی کے تودے گرنے اور مختلف مقامات پر حاثات کے دوران اب تک 13 افراد ہلاک جبکہ کم از کم دو درجن کے قریب مکانات کو مکمل یا جزوی نقصان ہوا ہے۔‘

شدید بارشوں اور برف باری کے باعث ہونے والی لینڈ سلاڈنگ کی وجہ سے وادی نیلم ،لیپہ ،فاروڈ کہوٹہ اور مظفرآباد کا دیگر علاقوں سے زمینی رابطہ منقطع ہو گیا ہے۔