پاناما لیکس: وزیر اعظم کے استعفے کا مطالبہ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پاناما لیکس کے منظر عام پر آنے کے بعد دنیا کے بہت سے رہنما پریشانی کا شکار ہیں

پاکستان کی قومی اسمبلی میں جمعے کو ہونے والے اجلاس میں پیپلز پارٹی نے پاناما لیکس کے معاملے پر وزیر اعظم سے مستعفی جبکہ تحریک انصاف نے موجودہ چیف جسٹس کی سربراہی میں ایک کمیشن تشکیل دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

پاکستان پیپلز پارٹی کی رکن قومی اسمبلی شازیہ مری نے تقریر کرتے ہوئے کہا کہ پاناما لیکس کی خفیہ دستاویزات میں آف شور کمپنیز میں وزیر اعظم کے بچوں کا نام آنے کے بعد اب نواز شریف کے پاس کوئی اخلاقی جواز نہیں ہے کہ وہ اس عہدے پر فائز رہیں۔

* پاناما پیپرز پر پیپلز پارٹی، پی ٹی آئی پہلی بار’متحد‘

* پاناما پیپرز پر بحث:’ بین الاقوامی فرم سےتحقیقات کروائیں‘

* پاناما پیپرز ’سوال اخلاقیات کا ہے‘

انھوں نے کہا کہ اخلاقیات کا تقاضا تھا کہ نواز شریف اسی وقت وزیر اعظم کے عہدے سے الگ ہوکر خود کو احتساب کے لیے پیش کردیتے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزیر اعظم نواز شریف اور سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کے درمیان پارک لین لندن کے شریف فیملی کے فلیٹ پر ملاقات کی تصویر

شازیہ مری کا کہنا تھا کہ کیا یہ بہتر ہوتا کہ اس معاملے پر سپریم کورٹ کی جانب سے بھی از خود نوٹس نہیں لیا جاتا۔

پاکستان تحریک انصاف کے پارلیمانی لیڈر شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ پاکستان کے موجودہ چیف جسٹس کی سربراہی میں ایک بااختیار کمیشن تشکیل دیا جائے۔ اُنھوں نے کہا کہ اس معاملے کی تحقیقات کے لیے حکومت کی جانب سے اعلان کردہ کمیشن حزب مخالف کی جماعتوں کو کسی طور پر بھی قابل قبول نہیں ہے۔

انھوں نے کہا کہ پاناما لیکس کے بارے میں قومی احتساب بیورو، الیکشن کمیشن، ایف بی آر اور وفاقی تحقیقاتی ادارہ کیوں خاموش ہے۔؟ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ حزب مخالف کی جماعتیں کسی طور پر بھی وزیر اعظم کے اہلخانہ کی پگڑی اُچھالنا نہیں چاہتیں لیکن ہمارا مطالبہ بھی جائز ہے کہ اس معاملے کی آزادانہ تحقیقات ہونی چاہیے۔

متحدہ قومی موومنٹ کے رکن قومی اسمبلی آصف حسنین کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن اب آئین کے ارٹیکل 62 اور63 کے بارے میں کیوں خاموش ہے۔؟ اُنھوں نے کہا کہ آئین میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ جو شخص صادق اور امین نہ ہو وہ کسی طور پر وزیر اعظم بننا تو کیا اسمبلی کا رکن تک نہیں بن سکتا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اس معاملے پر دو دن سے اسمبلی میں حزب اختلاف احتجاج کر رہی ہے

وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید کا کہنا تھا کہ حزب مخالف کی جماعتوں کے ارکان اس معاملے پر وزیر اعظم کو ایسے تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں جیسے وہ خود گنگا اور جمنا میں نہائے ہوئے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ پارٹی کے چندے کی رقوم میں خردبرد کے الزام میں عدالتی حکم امتناعی کے چھپے ہوئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ اگر حزب مخالف کی جماعتوں کو حکومت کی جانب سے بنائے گئے کمیشن پر اعتراض ہے تو پھر سپریم کورٹ کے دروازے کھلے ہیں۔

وزیر اطلاعات کی تقریر کے دوران پاکستان تحریک انصاف اور حکومتی ارکان اسمبلی کے دوران نوک جھونک بھی ہوئی اور غیر پارلیمانی الفاظ بھی استعمال کیے گئے جسے قومی اسمبلی کے سپیکر نے کارروائی سے ہدف کروا دیا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس اب 12 اپریل کو ہوگا۔

اسی بارے میں