اسلام آباد میں’را کی کارروائی کا خطرہ‘، سکیورٹی الرٹ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اسلام آباد کے مضافاتی علاقوں جن میں ترنول، روات اور بارہ کہو شامل ہیں میں بھی سرچ آپریشن جاری ہے

وفاقی حکومت نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو اسلام آباد اور اس کے جڑواں شہر راولپنڈی میں سرچ آپریشن کے ساتھ ساتھ حساس علاقوں میں حفاظتی اقدامات کو انتہائی سخت کرنے کی ہدایت کی ہے۔

جن حساس علاقوں میں سکیورٹی کو مزید سخت کرنے کی ہدایت کی گئی ہے ان میں بےنظیر بھٹو انٹرنیشل ایئرپورٹ کے علاوہ کنٹونمنٹ بورڈ اور اسلام آباد کے متعدد علاقے بھی شامل ہیں جن میں ریڈ زون بھی شامل ہے۔

سکیورٹی کے اقدامات سخت کرنے کے یہ احکامات خفیہ اداروں کی طرف سے دہشت گردی سے نمٹنے کے قومی ادارے یعنی نیکٹا کو لکھے گئے خط کی روشنی میں دیے گئے ہیں۔

وزارت داخلہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ خفیہ اداروں کی طرف سے لکھے گئے اس خط میں کہا گیا ہے کہ بھارتی خفیہ ایجنسی را اور افغانستان کی خفیہ ایجنسی نیشنل ڈائریکٹریٹ آف سکیورٹی (این ڈی ایس) نے ان علاقوں میں شدت پسندی کی کارروائیاں کرنے کی منصوبہ بندی کی ہے۔

اس کے علاوہ ان خفیہ معلومات میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اس منصوبہ بندی کو عملی جامہ پہنانے کے لیے کچھ افراد کو ذمہ داریاں بھی سونپی گئی ہیں۔

خفیہ اداروں کی اس رپورٹ کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں کو ہائی الرٹ پر رکھا گیا ہے۔

بدھ کے روز ان اطلاعات کے بعد اسلام آباد کی انسداد دہشت گردی اور مقامی عدالتوں میں مختلف مقدمات کی پیروی کے لیے قیدیوں کو بھی عدالتوں میں پیش نہیں کیا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بےنظیر بھٹو انٹرنیشل ائرپورٹ کے علاوہ کنٹونمنٹ بورڈ اور اسلام آباد کے متعدد علاقے سکیورٹی سخت کرنے کی ہدایت

اسلام آباد پولیس کے حکام کا کہنا تھا کہ اس بارے میں عدالتوں کو آگاہ کر دیا گیا ہے جبکہ راولپنڈی کی عدالتوں میں بھی بہت کم تعداد میں قیدیوں کو پیش کیا گیا۔

وزارت داخلہ کے اہلکار کے مطابق شدت پسندی سے متعلق خفیہ اداروں کی رپورٹ میں بھارتی خفیہ ایجنسی را کا ذکر تو بہت زیادہ کیا جاتا ہے اور اس بارے میں ثبوت بھی پیش کیے جاتے ہیں تاہم افغان انٹیلیجنس ایجنسی (این ڈی ایس) کا ذکر بہت کم آیا ہے۔

افغانستان میں بھارتی خفیہ ایجنسی را کے ٹھکانوں سے متعلق پاکستان کی سویلین اور فوجی قیادت افغان حکام سے بات چیت کرتے رہے ہیں اور افغان حکام پاکستان کو یہ یقین دلاتے رہے ہیں کہ اُن کی سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال نہیں ہوگی۔

پاکستان کے دونوں ہمسایوں کے خفیہ اداروں کی ممکنہ کارروائی کی اطلاعات کے پیش نظر وفاقی دارالحکومت میں واقع دو یونیورسٹیزقائد اعظم یونیورسٹی اور علامہ اقبال یونیورسٹی میں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے سرچ آپریشن کیا ہے تاہم وہاں سے کسی مشتبہ شخص کے گرفتار ہونے کی معلومات نہیں مل سکیں۔

اسلام آباد کے مضافاتی علاقوں جن میں ترنول، روات اور بارہ کہو شامل ہیں میں بھی سرچ آپریشن جاری ہے۔

اسی بارے میں