’حکومتی ضوابطِ کار کے تحت کمیشن نہیں بنایا جا سکتا‘

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption حکومتِ پاکستان نے یہ خط چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کو اس وقت ارسال کیا تھا جب وہ ترکی کے دورے پر روانہ ہونے والے تھے

پاکستان کی سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے پاناما لیکس کے معاملے پر تحقیقات کے لیے حکومت کی طرف سے بھجوائے گئے ضوابط کار کے تحت عدالتی کمیشن تشکیل دینے سے معذوری ظاہر کر دی ہے۔

حکومت کی جانب سے تحقیقاتی کمیشن کی تشکیل کے لیے تحریر کردہ خط کے جواب میں جسٹس انور ظہیر جمالی نے کہا ہے کہ اس سلسلے میں جو ضوابطِ کار پیش کیے گئے ہیں وہ اتنے وسیع ہیں کہ بظاہر اس کے تحت کمیشن کو اپنی کارروائی مکمل کرنے میں کئی برس لگ جائیں گے۔

٭ ’الزام ثابت ہوا تو وقت ضائع کیے بغیر گھر چلا جاؤں گا‘

چیف جسٹس نے خط میں یہ بھی کہا ہے کہ پاکستان کمیشن آف انکوائری ایکٹ 1956 کے تحت محدود دائرہ کار میں اگر کمیشن تشکیل دیا گیا تو وہ ایک بےاثر کمیشن ہوگا جس سے مقصد حاصل نہ ہو پائے گا اور نام خراب ہوگا۔

٭ پاناما لیکس کیا ہیں اور ان دستاویزات میں کن کن کے نام آئے: بی بی سی اردو کا خصوصی ضمیمہ

خط میں کہا گیا ہے کہ کمیشن تشکیل دینے کے حوالے سے کسی فیصلے پر پہنچنے سے قبل ضروری ہے کہ جن افراد، خاندانوں، گروپوں، کمپنیوں وغیرہ کے بارے میں تحقیقات کے لیے کہا گیا ہے ان کی متعلقہ معلومات اور کل تعداد مہیا کی جائے۔

چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کی طرف سے لکھے گئے خط کے مطابق جب تک یہ معلومات اور تفصیلات مہیا نہیں کی جاتیں اور کسی مناسب قانون کے تحت کمیشن کی تشکیل کے معاملے پر ازسرِنو غور نہیں کیا جاتا تب تک حکومت کے خط کا کوئی حتمی جواب نہیں دیا جا سکتا۔

وزارت قانون کے ایک اہلکار کے مطابق چیف جسٹس کی طرف سے لکھے گئے خط کی کاپی حکومتی عہدیداران کو بھجوا دی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption چیف جسٹس کی جانب سے لکھے گئے خط کا عکس

مسلم لیگ نواز کے رہنما دانیال عزیز نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت چیف جسٹس کے اس خط کا جواب دے گی۔

حزب مخالف کی جماعتوں نے چیف جسٹس کے خط کو اپنے موقف کی تائید قرار دیا ہے۔ سینیٹ میں قائد حزب اختلاف چوہدری اعتزاز احسن کا کہنا ہے کہ کسی ملزم کے خلاف تحقیقات اس (ملزم) کے ضوابط کار کے تحت نہیں کی جاسکتی۔

سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ چیف جسٹس کی طرف سے حکومتی خط کا جواب دیے جانے کے بعد حکومت کے پاس حزب مخالف کی جماعتوں کے ساتھ مل کر متفقہ ضوابط کار طے کرنے کے علاوہ اور کوئی راستہ نہیں ہے۔

حکومتِ پاکستان نے تحقیقاتی کمیشن کی تشکیل کے لیے چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کو خط گذشتہ ماہ اس وقت ارسال کیا تھا جب وہ ترکی کے دورے پر روانہ ہونے والے تھے اور عام خیال یہ ہی تھا کہ چیف جسٹس ترکی سے واپسی پر حکومتی خط کا جائزہ لیں گے۔

خیال رہے کہ اپوزیشن کی طرف سے مطالبے کے بعد حکومت چیف جسٹس کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیشن بنانے پر تیار تو ہو گئی تھی لیکن اس معاملے پر تحقیقات کے لیے حکومت نے جو ضوابط کار تجویز کیے تھے ان کو حزب اختلاف کی جماعتوں نے یکسر مسترد کر دیا تھا۔

وزیرِ اعظم نواز شریف اس معاملے پر پیر کو قومی اسمبلی میں آ کر پالیسی بیان بھی دینے والے ہیں جبکہ اپوزیشن کی جانب سے ان کے سامنے رکھے گئے سات سوالوں کے جواب میں حکومت نے بھی اپوزیشن سے سات سوال کیے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption نواز شریف اپنے خاندان پر لگنے والے الزامات کے بعد مختصر عرصے میں دو بار قوم سے خطاب کرچکے ہیں

گذشتہ ماہ پاناما کی ایک لا فرم موساک فونسیکا سے ملنے والی خفیہ دستاویزات میں وزیر اعظم میاں نواز شریف کے بچوں کی کاروباری کپمنیوں اور جائیداد کا انکشاف ہونے کے بعد سے حکومتِ پاکستان پر حزبِ اختلاف کی جماعتوں کی جانب سے دباؤ ڈالا جا رہا ہے کہ سارے معاملے کی عدالتی تحقیقات کروائی جائیں۔

پامانا لیکس کے منظرِ عام پر آنے کے بعد وزیرِ اعظم نواز شریف نے قوم سے خطاب میں اپنے خاندان پر لگے الزامات کی تحقیقات سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج سے کروانے کا اعلان کیا تھا۔

لیکن حزبِ اختلاف کی جماعتوں خصوصاً پاکستان تحریکِ انصاف نے مطالبہ کیا تھا کہ معاملے کی تحقیقات کے لیے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی سربراہی میں کمیشن بنایا جائے جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی کا مطالبہ تھا کہ وزیرِ اعظم کے خاندان کے بیرونِ ملک میں موجود کاروبار کا فرانزک آڈٹ کروایا جائے۔

حکومت نے حزبِ اختلاف کے اس مطالبے کو اس وقت مسترد کر دیا تھا اور اس کا اصرار تھا کہ تحقیقات ریٹائرڈ جج سے ہی کروائی جائیں گی۔

دو سال قبل تحریکِ انصاف کے اسلام آباد میں سنہ 2013 کے انتخابات میں مبینہ دھاندلی کے خلاف دھرنے کے بعد جو عدالتی کمیشن تشکیل دیا گیا تھا اس کے لیے حکومت نے خصوصی طور پر ایک صدارتی آرڈیننس جاری کیا تھا۔

اس کمیشن کے ضوابط کار بھی تحریک انصاف کے ساتھ مشاورت کے بعد بنائے گئے تھے اور اس مرتبہ بھی حزب مخالف کی جماعتیں اسی طریقے سے عدالتی کمیشن بنانے کا مطالبہ کر رہی ہیں۔

اسی بارے میں