بلوچستان میں دو مختلف واقعات میں پانچ افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ EPA

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں بم دھاکے اور تشدد کے ایک واقعے میں دو پولیس اہلکاروں سمیت پانچ افراد ہلاک اور چھ زخمی ہو گئے۔ زخمی ہونے والوں میں تین پولیس اہلکار بھی شامل ہیں۔

بلوچستان میں بم دھماکے کا واقعہ پیر کی شب دارالحکومت کوئٹہ میں اسپنی روڈ پر پیش آیا۔

٭ کوئٹہ میں دھماکہ، دو پولیس اہلکار ہلاک

٭ کوئٹہ میں دھماکہ، پانچ پولیس اہلکار زخمی

جائے وقوعہ پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے بلوچستان کے وزیر داخلہ میر سرفراز بگٹی نے بتایا کہ نامعلوم افراد نے اسپنی روڈ پر دھماکہ خیز مواد نصب کیا تھا۔

انھوں نے بتایا کہ اس دھماکہ خیز مواد کو اس وقت ریموٹ کنٹرول سے اڑایا گیا جب پولیس کی ایک گاڑی وہاں سے گزرہی تھی۔

دھماکے میں دو پولیس اہلکار ہلاک جب کہ تین پولیس اہلکاروں سمیت چار افراد زخمی ہوئے۔ زخمیوں میں ایک راہگیر بھی شامل ہے۔

ادھر بلوچستان میں تشدد کے ایک دوسرے واقعے میں تین دیگر افراد ہلاک ہوئے۔

ان افراد کی ہلاکت کا واقعہ ضلع ہرنائی کے علاقے شاہرگ میں پیش آیا۔

ہرنائی میں انتظامیہ کے ذرائع نے بتایا کہ اس علاقے میں مسلح افراد ایک گھر میں داخل ہوئے اور فائرنگ کی۔

فائرنگ کے نتیجے میں گھر کے تین افراد ہلاک جب کہ دو خواتین زخمی ہوگئیں۔ حملہ آور فرار ہوتے ہوئے دو افراد کو اغوا کر کے اپنے ساتھ لے گئے ۔

ذرائع نے بتایا کہ ہلاک، زخمی اور اغوا ہونے والے تمام افراد کا تعلق ایک ہی خاندان سے ہے۔

انتظامیہ کے ذرائع نے بتایا کہ اس واقعے کا مقدمہ درج کرکے تحقیقات شروع کردی گئی ہیں۔

ہرنائی بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ کے مشرق میں زیارت سے متصل ضلع ہے۔

اگرچہ مجموعی طور پر یہ ایک پر امن علاقہ ہے لیکن اس کے سبی اور بولان سے متصل علاقوں میں سیکورٹی فورسز پر حملے اور بد امنی کے دیگر واقعات رونما ہوتے رہے ہیں۔

اسی بارے میں