پی ٹی آئی کے 5 ایم این اے کا پرویز خٹک کے خلاف تحریک چلانے کا اعلان

تصویر کے کاپی رائٹ b
Image caption پانچوں ایم این اے کی شکایت صوبائی حکومت سے ہیں

پاکستان کے صوبے خیبرپختونخوا سے تعلق رکھنے والے تحریک انصاف کے پانچ ممبران قومی اسمبلی پر مشتمل ایک گروپ نے وزیرِ اعلٰی خیبر پختونخوا پرویز خٹک اور صوبائی وزراء پر کریشن کے الزامات لگاتے ہوئے ان کے خلاف عید الفطر کے بعد تحریک چلانے کا اعلان کردیا ہے۔

گروپ کے ایک ممبر اور ضلع ہنگو سے تعلق رکھنے والے تحریک انصاف کے ایم این اے خیال زمان اورکزئی نے بی بی سی کو بتایا کہ پرویز خٹک صوبے میں تحریک انصاف کے تبدیلی کے ایجنڈے کو ناکام بنانا چاہتے ہیں اور صوبائی حکومت کو ذاتی جاگیر میں تبدیل کیا ہوا ہے۔

انھوں نے کہا کہ ’ہماری جماعت اس ایجنڈا کے تحت اقتدار میں آئی تھی کہ ہم حقیقی تبدیلی لائیں گے، لوگوں کو انصاف ملے گا، بدعنوان افراد کا احتساب کرینگے لیکن پرویز خٹک اور ان کے کرپٹ وزراء نے سارے نظام کو تباہ کرکے رکھ دیا ہے اور تمام اداروں کو اپنے ذاتی مقاصد کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔‘

رکن قومی اسمبلی کے مطابق ان کی جماعت ایک وژن کے ساتھ آئی تھی لیکن بدقسمتی سے کوئی تبدیلی نہیں آئی بلکہ پرانی حکومتوں کی طرح پرویز خٹک کی حکومت میں بھی نوکریاں بک رہی ہے اور ہر جگہ بندر بانٹ ہو رہی ہے اور ٹھیکے فروخت کیے جارہے ہیں۔

انھوں نے مزید کہا کہ خیبر پختونخوا میں کوئی اپوزیشن نہیں ہے بلکہ اربوں روپے کے فنڈز حکومت کے مخالف ممبران میں تقسیم کیے جا رہے ہیں اور جو افراد ان کو یہودی لابی کے ایجنٹ کے نام سے پکار رہے ہیں ان کے کام سب سے پہلے ہو رہے ہیں اور ان کو اچھی اچھی نوکریاں بھی مل رہی ہیں۔

خیال زمان اورکزئی کے مطابق پارٹی کے منشور پر عمل درامد کے لیے ابتدائی طور پر پانچ ارکانِ قومی اسمبلی کا گروپ میدان میں نکل آیا ہے لیکن اس کے علاوہ چھ کے قریب اور ممبران قومی اسمبلی بھی ان کے ساتھ اس تحریک میں شامل ہیں۔

ان سے جب سوال کیا گیا کہ یہ تمام معاملات پارٹی سربراہ عمران خان کے نوٹس میں لائے گئے تو اس پر انھوں نے کہا کہ ’خان صاحب نے اپنے طورپر کوششیں کی ہے لیکن پرویز خٹک اور ان کے وزراء پر کوئی اثر نہیں ہوا اس لیے اب ممبران اس کے خلاف میدان میں نکل آئے ہیں۔‘

انھوں نے اس بات کی وضاحت کی کہ ان کی پارٹی سے کوئی ناراضگی نہیں ہے بلکہ اس تحریک کے شروع کرنے کا مقصد عمران خان کے ہاتھوں کو مضبوط بنانا اور کرپٹ ٹولے کو تحریک انصاف سے باہر کرنا ہے۔

خیال رہے کہ تحریک انصاف کے پانچ اراکین قومی اسمبلی پر مشتمل ایک گروپ نے اتوار کو ڈیرہ اسمعیل خان میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پرویز خٹک کے خلاف بغاوت کردی تھی۔ اس گروپ میں خیال زمان اورکزئی کے علاوہ داور خان کنڈی، امیر اللہ خان، جنید اکبر اور ساجد نواز شامل ہیں۔

اسی بارے میں