کوئٹہ: پولیس کا پانچ شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ

تصویر کے کاپی رائٹ AP

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں پولیس سے مبینہ فائرنگ کے تبادلے میں پانچ شدت پسند ہلاک ہوئے ہیں۔

سرکاری حکام کے مطابق پیر کی شب یہ مقابلہ چشمہ اچوزئی کے علاقے میں ہوا۔

محکمہ داخلہ حکومت بلوچستان کے ذرائع نے رات گئے بی بی سی کو بتایا کہ اس علاقے میں پولیس موبائل پر نامعلوم مسلح افراد نے حملہ کیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ پولیس کی جوابی کارروائی میں پانچ حملہ آور ہلاک ہوگئے جن کا تعلق ایک شدت پسند تنظیم سے تھا۔اس کارروائی میں کسی پولیس اہلکار یا کسی اور قانون نافذ کرنے والے ادارے کے اہلکار کی زخمی ہونے کی اطلاع نہیں۔

اگرچہ ذرائع نے یہ بتایا کہ ہلاک ہونے افراد کا تعلق ایک شدت پسند تنظیم سے تھا لیکن تاحال یہ نہیں بتایا گیا کہ ان کا تعلق کس شدت پسند تنظیم سے تھا۔

آزاد ذرائع سے تاحال چشمہ اچوزئی کے علاقے میں فائرنگ کے تبادلے میں ہلاکتوں اور کسی شدت پسند تنظیم سے تعلق کی تصدیق نہیں ہوئی ہے۔

رواں مہینے کے دوران کوئٹہ شہر میں یہ اپنی نوعیت کا دوسرا واقعہ ہے۔

اس سے قبل تین جون کو سریاب کے علاقے میں حکومت بلوچستان کے ترجمان نے اسی طرح کے ایک مبینہ پولیس مقابلے کا دعویٰ کیا تھا۔سریاب میں ہونے والے اس میں مقابلے میں چار مبینہ شدت پسند ہلاک ہوئے تھے۔

حکومت بلوچستان کے ترجمان نے سریاب روڈ پر ہلاک ہونے والوں کے بارے میں یہ کہا تھا کہ ان کا تعلق ایک مذہبی شدت پسند تنظیم سے تھا۔

اسی بارے میں