آرمی چیف فوجی عدالت سے انصاف دلوائیں: طاہر القادری

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ طاہرالقادری نے پاکستان کے آرمی چیف جنرل راحیل شریف سے مطالبہ کیا ہے کہ سانحہ ماڈل واقعے کے مقدمات کی سماعت فوجی عدالت کروا کر انھیں انصاف فراہم کریں۔

جمعے کو لاہور میں ماڈل ٹاون واقعے میں پولیس کے ہاتھوں ہلاک ہونے والے 14 کارکنوں کی برسی کے موقع پر پاکستان عوامی تحریک نے مال روڈ پر احتجاجی دھرنا دیا۔

کارکنوں سے خطاب میں ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ جنرل راحیل شریف کہ کہنے پر ہی ایف آئی آر کٹی تھی اور پوری قوم کو جنرل راحیل پر اعتماد ہے اور انھیں بھی انصاف وہی دلائیں گے۔

طاہرالقادری نے کہا کہ ان کا مطالبہ انصاف اور قصاص یعنی ’خون کے بدلے خون‘ ہے جبکہ موجودہ حکمرانوں کے ہوتے ہوئے انصاف کا حصول ممکن نہیں ہے۔

انھوں نے کہا کہ دوسال گزر گئے کارکنوں کے قتل کے مقدمات آگے نہیں بڑھ سکے ہیں اس لیے وہ حکومت کا خاتمہ چاہتے ہیں۔

طاہر القادری نے کہا کہ ’ماڈل ٹاؤن شہدا کے خاندانوں کو دیت کے نام پر کروڑوں روپے دینے اور بیرون ملک ملازمتوں کی پیشکش کی گئی لیکن نہ تو حکمرانوں کا جبر اور ظلم انہیں جھکا سکا۔اور نہ دولت و زر ان کے اعتماد کو متزلزل کرسکا، ہم اب ۔ قانون کی جنگ لڑتے رہیں گے کوئی سودا نہیں کریں گے۔‘

اس موقع پر جمعے کی شام مغرب سے لے کر ہفتے کی صبح تک دھرنا دیے گیا جس میں مرد و خواتین اور بچوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

اس دھرنے میں پاکستان پیپلزپارٹی، جماعت اسلامی، تحریک انصاف ، مسلم لیگ ق، ایم کیوایم، مجلس وحدت المسلمین، آل پاکستان مسلم لیگ کے وفود اور عوامی مسلم لیگ کے شیخ رشید نے بھی اظہار یکجہتی کرتے ہوئے شرکت کی۔

طاہر القادری کی جانب سے دھرنے کو معطل کرنے کے اعلان کے بعد پرامن طور پر منتشر ہوگئے۔

اسی بارے میں