’مفتی کو عید کا چاند نظر آ گیا‘

Image caption سینیٹ کی کمیٹی کو بتایا گیا کہ رویتِ ہلال کمیٹی کے ارکان کی تعداد بڑھا کر 25 کر دی گئی ہے

پاکستان میں سوشل میڈیا پر مقبول شخصیت قندیل بلوچ کا چرچا منگل کو پاکستان کے سینیٹ کی مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی کی قائمہ کمیٹی میں اس وقت ہوا جب رویت ہلال کمیٹی کے ارکان کی فہرست پیش کرتے ہوئے کمیٹی کو بتایا گیا کہ اس میں وہ عالم دین بھی شامل ہیں جن کی قندیل بلوچ کے ساتھ تصاویر سوشل میڈیا کی زینت بنی ہیں۔

مفتی عبدالقوی خان جو پاکستان تحریک انصاف کے مذہبی ونگ کے سربراہ ہیں ان کی قندیل بلوچ کے ساتھ تصاویر پیر کی شام سے ٹوئٹر اور فیس بک پر شیئر کی جا رہی ہیں۔

٭ قندیل بلوچ جو کرتی ہیں دل سے کرتی ہیں

مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی کی قائمہ کمیٹی کا اجلاس کمیٹی کے سربراہ حکمراں اتحاد میں شامل جماعت جمیعت علمائے اسلام سے تعلق رکھنے والے سینیٹر حافظ حمد اللہ کی سربراہی میں منعقد ہوا جس کے ایجنڈے میں رویت ہلال کمیٹی کو قانونی حیثیت دینے کا معاملہ بھی شامل تھا۔

اجلاس کی کارروائی کے دوران اس وقت دلچسپ صورت حال پیدا ہوگئی جب وزارت مذہبی امور کے حکام نے رویت ہلال کمیٹی کے ارکان کی فہرست میں شامل مفتی عبدالقوی کا نام لیا تو حافظ حمد اللہ بولے ’یہاں رک جائیں اور بتائیں کہ یہ وہی مفتی ہیں جن کی تصاویر قندیل بلوچ کے ساتھ سوشل میڈیا پر شائع ہوئی ہیں۔‘ جس پر حکام نے کہا جی ہاں یہ وہی شخصیت ہیں۔

اس پر تبصرہ کرتے ہوئے حافظ حمد اللہ کا کہنا تھا کہ مفتی عبدالقوی خان کو آدھے رمضان میں ہی عید کا چاند نظر آ گیا ہے اور یہ چاند بھی انھیں افطاری کے بعد ہی نظر آیا ہے۔

Image caption قندیل بلوچ نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ مفتی عبدالقوی خان نے انھیں ہوٹل میں بلایا اور شادی کی پیشکش کی تھی

کمیٹی کے سربراہ کا کہنا تھا کہ سوشل میڈیا پر جاری ہونے والی تصاویر میں قندیل بلوچ نے مفتی عبدالقوی کی ٹوپی اپنے سر پر رکھی ہوئی ہے تو اس لیے بہتر ہوگا کہ اُنھیں بھی رویت ہلال کی کمیٹی میں شامل کر لیا جائے جس پر کمیٹی میں ایک زور دار قہقہہ گونجا۔

واضح ہے کہ خود حافظ حمد اللہ کے خلاف سماجی کارکن ماروی سرمد کو ایک ٹی وی شو میں سنگین نتائج کی دھمکیاں دینے پر مقدمہ درج ہے اور وہ ان دنوں ضمانت پر ہیں۔

قندیل بلوچ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ مفتی عبدالقوی خان نے انھیں اصرار کر کے ہوٹل میں ملاقات کے لیے بلایا تھا اور دورانِ ملاقات نکاح کی پیشکش بھی کی تھی۔

تاہم مفتی عبدالقوی نے قندیل بلوچ کے اس دعوے کی نفی کی کہ اُنھوں نے ایسی کوئی پیشکش کی تھی۔

مفتی عبدالقوی خان نے اس بارے میں بی بی سی کو بتایا کہ قندیل بلوچ پیر کو اُن سے ملاقات کے لیے آئی تھیں اور اُنھوں نے نماز اور روزے کے بارے میں دریافت کیا تھا۔

اُنھوں نے کہا کہ قندیل پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان سے ملاقات کی خواہش رکھتی تھیں اور اس سلسلے میں ان کی مدد چاہتی تھیں تاہم انھوں نے اس کی حامی نہیں بھری۔

اسی بارے میں