پشاور میں سرکاری افسر قتل

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں حکام کا کہنا ہے کہ سول سیکریٹریٹ کے ایک افسر کو مسلح افراد نے فائرنگ کرکے قتل کر دیا ہے۔

پولیس کے مطابق یہ واقعہ بدھ کی شام پشاور شہر کے علاقے یکہ توت میں مسلم آباد کے مقام پر پیش آیا۔ یکہ توت پولیس سٹیشن کے ایک اہلکار دولت خان نے بی بی سی کو بتایا کہ سول سیکریٹریٹ پشاور کے سیکشن افسر نواب صافی عشا کی نماز پڑھ کر گھر جارہے تھے کہ اس دوران دو مسلح افراد نے ان پر اندھادھند فائرنگ کر دی جس سے وہ ہلاک ہو گئے۔

انھوں نے کہا کہ مقتول کے رشتہ داروں سے معلوم ہوا کہ ان کی کسی خاندانی دشمنی یا لین دین کا تنازع نہیں تھا۔

اس واقعے کی وجہ فوری طورپر معلوم نہیں ہو سکی اور نہ ہی کسی تنظیم کی طرف سے تاحال اس کی ذمہ داری قبول کی گئی ہے۔

مقتول نواب صافی اس سے پہلے جنوبی وزیرستان کے اسسٹنٹ پولیٹیکل ایجنٹ بھی رہ چکے تھے۔

پشاور میں کچھ عرصہ سے ہدف بنا کر قتل کے واقعات میں پھر سے اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔ پچھلے چند مہینوں کے دوران ہونے والے زیادہ تر واقعات میں پولیس اہلکاروں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

گذشتہ روز بھی پشاور میں ایک پولیس موبائل کو ریموٹ کنٹرول بم دھماکے میں نشانہ بنایا گیا تھا جس میں ایک اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔ اس سے پہلے شہر میں اہل تشیع فرقے سے تعلق رکھنے والے افراد کو بھی متعدد مرتبہ ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں نشانہ بنایا گیا ہے جس میں اب تک درجنوں افراد مارے گئے ہیں۔

اس کے علاوہ قبائلی علاقوں میں کام کرنے والے سرکاری اہلکار بھی فاٹا اور صوبے کے مختلف اضلاع میں شدت پسندوں کے حملوں کی زد میں رہے ہیں۔

اسی بارے میں