ایدھی کی حالت تشویش ناک، وینٹیلیٹر پر منتقل

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عبدالستار ایدھی کے بیٹے فیصل ایدھی کے مطابق اُن کے والد کے گردے ناکارہ ہو گئے ہیں اور وہ ڈایالسِس پر ہیں

پاکستان کی فلاحی تنظیم ایدھی فاؤنڈیشن کے بانی عبدالستار ایدھی کے صاحبزادے فیصل ایدھی کے مطابق عبدالستار ایدھی کی حالت تشویش ناک ہے اور انھیں وینٹیلیٹر پر منتقل کر دیا گیا ہے۔

٭ ایدھی کی عیادت مت کرو، وسعت اللہ خان کا کالم

٭ علاج پاکستانی ہسپتالوں ہی میں کراؤں گا: ایدھی

جمعے کو کراچی میں اپنی والدہ بلقیس ایدھی کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے فیصل ایدھی نے بتایا کہ جمعے کی صبح ڈئیالیسس کے دوران عبدالستار ایدھی کی سانس اکھڑنے لگی تھی جس کے باعث انھیں وینٹیلیٹر پر منتقل کرنا پڑا۔

عبدالستار ایدھی سنہ 2013 سے گردے کے عارضے میں مبتلا ہیں۔

خیال رہے کہ عبدالستار ایدھی کی عمر 92 سال ہے اور فیصل ایدھی کے بقول ان کی عمر زیادہ ہونے کے سبب ان کے گردے تبدیل نہیں کیے جاسکتے۔

فیصل ایدھی کا کہنا تھا ان کی طبیعت میں بہتری تک انھیں ویٹیلیٹر پر ہی رکھا جائے گا۔

اس موقع پر بلقیس ایدھی نے عوام سے عبدالستار ایدھی کی صحت یابی کی درخواست کی۔

عبدالستار ایدھی کے بیٹے فیصل ایدھی کے مطابق اُن کے والد کے گردے ناکارہ ہو گئے ہیں اور وہ ڈئیالیسِس پر ہیں۔

فیصل کا کہنا ہے کہ پہلے اُن کا ڈئیالیسِس ہفتے میں دو مرتبہ ہوتا تھا لیکن اب ہفتے میں تین بار انھیں ڈئیالیسِس کروانا پڑتا ہے۔

وزیراعظم نواز شریف نے بھی عبدالستار ایدھی کی صحت یابی کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار کیا ہے۔

سماجی کارکن عبدالستار ایدھی کراچی میں ایس آئی یو ٹی ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔ یہ ہسپتال بھی ایک فلاحی تنظیم کے تحت چلایا جاتا ہے۔

عبدالستار ایدھی نے کراچی میں ایک ایمبولینس اور ڈسپینسری سے سماجی خدمت کا آغاز کیا تھا۔ اس وقت چاروں صوبوں میں ان کی ایمولینس سروس، لاورث بچوں کے سینٹر اور منشیات کے عادی لوگوں کی بحالی کے مراکز قائم ہیں۔

اسی بارے میں