الیکشن کمیشن کے ارکان کی تعیناتی،28 جولائی تک مہلت

سپریم کورٹ
Image caption سپریم کورٹ کی طرف سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق اس از خود نوٹس کی سماعت 14 جولائی کو ہو گی

پاکستان کی سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے حکومت کو الیکشن کمیشن کے چاروں ارکان کی تعیناتی کے لیے 28 جولائی تک کی مہلت دی ہے اور کہا ہے کہ اگر تقرری کا عمل پہلے شروع کر دیا جاتا تو آئینی ادارہ غیر فعال تو نہ ہوتا۔

پاکستان کے چاروں صوبائی الیکشن کمشنرز ایک ماہ قبل اپنی مدتِ ملازمت مکمل کرنے کے بعد ریٹائر ہوگئے تھے اور تاحال ان عہدوں پر نئے ارکان کا تقرر نہیں کیا گیا ہے اور کمیشن غیر موثر ہو چکا ہے۔

٭غیر فعال الیکشن کمیشن، چیف جسٹس کا وفاق کو نوٹس

چیف جسٹس انور ظہیر جمالی نے ذرائع ابلاغ میں اس بارے میں آنے والی خبروں کے بعد بدھ کو الیکشن کمشن کے غیر فعال ہونے کا ازخود نوٹس لیتے ہوئے وفاق سے جواب طلب کیا تھا۔

جمعرات کو اس نوٹس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ آئینی ادارے کے غیر فعال ہونے سے متعلق از خود نوٹس لینے کا مقصد ہے کہ ملک میں قانون اور آئین کی عمل داری کو یقینی بنایا جائے۔

انھوں نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ایسا نہ ہو کہ اس الیکشن کمیشن کے ارکان کی تعیناتی میں چھ سال کاعرصہ لگ جائے جس طرح کافی عرصے سے ملک میں مردم شماری نہیں ہوئی۔

انھوں نے کہا کہ صوبائی الیکشن کمشنرز کے عہدے 12 جون کو خالی ہوئے تھے، عہدے خالی ہونے سے پہلے ہی اقدامات کیے جانے چاہیے تھے۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن کے غیر فعال ہونے کی وجہ سے سارا نظام متاثر ہو رہا ہے۔

Image caption پاکستان کے چاروں صوبائی الیکشن کمشنرز ایک ماہ قبل اپنی مدتِ ملازمت مکمل کرنے کے بعد ریٹائر ہوگئے تھے

الیکشن کمیشن کے غیر فعال ہونے کی وجہ سے بہت سی درخواستیں التوا کا شکار ہیں جبکہ اس کے علاوہ خالی ہونے والی قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی نشستوں پر ضمنی انتخابات نہیں ہو سکے۔

سماعت کے دوران ایڈیشنل اٹارنی جنرل رانا وقار نے عدالت کو بتایا کہ الیکشن کمیشن کے ارکان کی تعیناتی سے متعلق 22ویں آئینی ترمیم دس جون کو منظور ہوئی جس کے 45 دن کے اندر یعنی 27 جولائی تک اس پر عمل درآمد ہو جائے گا۔

اُنھوں نے کہا کہ وزیر اعظم بیماری کی وجہ سے ملک سے باہر تھے لیکن اس کے باوجود حزب مخالف کی جماعتوں کے ساتھ مشاورت کا عمل جاری ہے ۔

اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ عدالت کو اس معاملے پر تشویش ہے کہ آئینی ادارہ غیر فعال ہوگیا ہے اور اس بات سے کوئی غرض نہیں کہ سیاسی جماعتوں میں اس بارے میں کیا مشاورت ہو رہی ہے۔

خیال رہے کہ الیکشن کمیشن کے چاروں اراکین کی نامزدگی کے بارے میں تاحال حزب مخالف اور حکومت کے درمیان اتفاق رائے نہیں ہو سکا ہے۔

پاکستان کے آئین میں واضح طور پر لکھا ہے کہ الیکشن کمیشن کے اراکین کی تقرری کے لیے وزیر اعظم اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف کے درمیان مشاورت ضروری ہے تاہم اس میں حزب مخالف کی دیگر جماعتوں کے ساتھ مشاورت کا ذکر نہیں کیا گیا ہے۔

اسی بارے میں