’وہ قاتل بھائی سمیت سب کی کفالت کرتی تھی‘

تصویر کے کاپی رائٹ qandeelbaloch
Image caption قندیل کی موت نے پاکستان میں غیر کے نام پر قتل کے حوالے سے بحث چھیڑ دی کہ ’عورت کا کون کا رویہ قابلِ برادشت ہے؟‘

قندیل بلوچ کے والد نے اپنی بیٹی کے قتل کے بعد ان کی حمایت میں بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ ’وہ اپنے قاتل بھائی سمیت پورے گھرانے کی کفالت کیا کرتی تھیں۔‘

قندیل بلوچ کے والد محمد عظیم نے مقامی میڈیا کو بتایا: ’وہ میرے اس بیٹے سمیت سب کی کفالت کرتی تھی جس نے اسے قتل کیا۔‘

قندیل بلوچ کے بھائی نے خاندان کی عزت اچھالنے کے الزام میں انھیں غیرت کے نام پر نشہ آور دوا دینے کے بعد قتل کر دیا تھا۔

قندیل بلوچ سوشل میڈیا پر مقبول متنازع شخصیت تھیں۔

26 سالہ قندیل کا اصل نام فوزیہ عظیم تھا اور انھیں سوشل میڈیا پر بےباک بیانات، تصاویر اور ویڈیوز پوسٹ کرنے سے شہرت ملی۔ حال ہی میں ان کی مفتی عبدالقوی کے ساتھ تصاویر نے ہلچل مچائی تھی۔

ان کی موت نے پاکستان میں غیرت کے نام پر قتل کے حوالے سے بحث چھیڑ دی کہ ’عورت کا کون سا رویہ قابلِ برادشت ہے؟‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قندیل کی سوگوار والدہ

ماڈل اور اداکارہ قندیل بلوچ کو ملتان میں ان کے والدین کے گھر میں قتل کیا گیا۔ ان کے 25 سالہ بھائی وسیم کو گرفتار کیا گیا اور انھوں نے اعترافِ جرم بھی کر لیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ انھوں نے یہ قتل سوشل میڈیا پر قندیل کی تصاویر پوسٹ کیے جانے کی وجہ سے کیا۔

قندیل بلوچ نے اپنی سوشل میڈیا پوسٹوں میں خود کو حقوق نسواں کی علم بردار کہا تھا۔

14 جولائی کو انھوں نے فیس بک پر لکھا: ’میں ایک ماڈرن حقوق نسواں کی حامی ہوں۔ مجھے یہ انتخاب کرنے کی ضرورت نہیں کہ عورت کو کس طرح کا ہونا چاہییے۔ اور میرا نہیں خیال کہ ہمیں معاشرے کے لیے خود پر کوئی لیبل لگانے کی ضرورت ہے۔ میں آزاد سوچ اور آزاد ذہن والی ایک عورت ہوں اور مجھے ایسا ہی رہنا پسند ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قندیل بلوچ کے والد محمد عظیم نے کا کہنا تھا کہ ’ وہ میرے اس بیٹے سمیت سب کی کفالت کرتی تھی جس نے اسے قتل کیا۔‘

اس سے پہلے تین جولائی کو قندیل نے ایک فیس بک پوسٹ میں لکھا: ’مجھ سے محبت کرو یا نفرت، دونوں ہی میرے حق میں جاتے ہیں۔ اگر آپ مجھ سے محبت کریں گے تو میں آپ کے دلوں میں ہمیشہ رہوں گی اور اگر نفرت کریں گے ہمیشہ آپ کے ذہنوں میں رہوں گی۔‘

قندیل کے والدین نے ان کی قتل کی رپورٹ میں اپنے دو بیٹوں کو نامزد کیا ہے۔

ان کے بقول ان کے بیٹے قندیل کی کامیابیوں پر ناخوش تھے اور اس کے خلاف ہو گئے تھے حالانکہ وہ ان کی بھی کفالت کرتی تھی۔

ان کے علاقے کے لوگوں نے بھی اس قتل کی مذمت کی ہے۔

اسی بارے میں