قتلِ غیرت پر معافی کا سلسلہ بند کیا جائے: ایمنیسٹی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قندیل بلوچ کے مبینہ طور پر غیرت کے نام پر قتل کے خلاف مظاہرہ

انسانی حقوق کے عالمی ادارے ایمنیسٹی انٹرنیشنل نے پاکستانی حکام پر زور دیا ہے کہ وہ قتلِ غیرت اور عورتوں پر تشدد کے مجرموں کی معافی کا سلسلہ ختم کرے۔

ادارے نے ایک بیان میں کہا: ’قندیل بلوچ کے اپنے ہی بھائی کے ہاتھوں المناک قتل نے عورتوں اور مردوں کو خاندانی ناموس کے نام پر کیے جانے والے جرائم سے تحفظ کے لیے فوری عمل کی ضرورت کو نشان زد کر دیا ہے۔‘

ایمنیسٹی انٹرنیشنل نے پنجاب حکومت کی جانب سے قندیل بلوچ کے مقدمۂ قتل میں قتلِ غیرت کی شق شامل کرنےکو سراہا ہے جس کے تحت اب ان کے خاندان کو مجرم کو قانونی طور پر معاف کرنے کا حق نہیں رہے گا۔

گذشتہ ہفتےسوشل میڈیا سلیبریٹی قندیل بلوچ کو قتل کر دیا گیا تھا۔ ملتان کی پولیس نے کہا تھا کہ انھیں ان کے بھائی نے غیرت کے نام پر قتل کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قندیل بلوچ کے بھائی نے اعترافِ جرم کرتے ہوئے کہا کہ انھوں نے اپنی بہن کو غیرت کے نام پر قتل کیا

خود قندیل بلوچ کے بھائی نے ایک بیان میں کہا تھا کہ قندیل کی وجہ سے ان کے خاندان کی بےعزتی ہو رہی تھی اور سوشل میڈیا پر قندیل کی جو ویڈیوز آئی تھیں ان پر لوگ انھیں طعنے دیتے تھے جو ان سے برداشت نہیں ہوتے تھے۔

ایمنیسٹی انٹرنیشنل کی چمپا پٹیل نے کہا کہ ’اسے استثنا نہیں بلکہ معمول ہونا چاہیے۔ پاکستان کو بنیادی اصلاحات کی ضرورت ہے جن کے تحت غیرت کے نام پر کیے جانے والے قتل کے مجرموں کو بری کیے جانے کا سلسلہ بند ہونا چاہیے۔

’قتلِ غیرت کے مجرموں کو اپنے جرائم کی سزا دینے میں ناکامی کی وجہ سے پاکستانی ریاست متاثرین کو انصاف فراہم کرنے کے فرض سے پہلوتہی کر رہی ہے۔ اس سے ہزاروں لوگ خطرے کی زد میں آ جاتے ہیں جن کی بڑی تعداد عورتوں اور بچوں پر مشتمل ہے۔‘

ایمنیسٹی انٹرنیشنل کے اعداد و شمار کے مطابق پاکستان میں قتلِ غیرت میں اضافہ ہو رہا ہے۔ 2015 میں ملک میں 11 سو عورتیں اپنے رشتے داروں کے ہاتھوں غیرت کے نام پر قتل کی گئیں۔ 2014 میں یہ تعداد ایک ہزار جب کہ 2013 میں 869 تھی۔

اسی بارے میں