اسامہ بن لادن کے مکان کی جگہ پر قبرستان

Image caption القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کا یہ مکان مقامی انتظامیہ اور صوبائی حکومت کے لیے درد سر بنا رہا ہے

ایبٹ آباد میں اسامہ بن لادن کے مکان کی جگہ کو قبرستان کے لیے وقف کیا جا رہا ہے اور اس مقصد کے لیے کینٹونمنٹ بورڈ نے پلاٹ کے آس پاس چار دیواری کی تعمیر شروع کر دی ہے۔

یہ مکان مقامی انتظامیہ اور صوبائی حکومت کے لیے درد سر بنا رہا ہے، یہی وجہ ہے کہ اس پلاٹ کے بارے میں پانچ سالوں میں کوئی فیصلہ نہیں ہو سکا کہ یہاں کیا کیا جائے۔ اب کینٹونمنٹ بورڈ نے فیصلہ کیا ہے کہ یہ جگہ قبرستان کے لیے وقف کر دی جائے۔

اس سے پہلے مشورہ دیا گیا تھا کہ یہاں بچوں کے لیے پارک بنایا جائے لیکن اس تجویز کو مسترد کر دیا گیا تھا۔

٭ اسامہ کے پڑوسیوں کی زندگیاں بدل گئیں

کینٹونمنٹ بورڈ نے اس جگہ کو قبرستان بنانے کے لیے چاردیواری کا کام شروع کر دیا ہے۔

کینٹونمنٹ بورڈ کے رکن بشیر خان نے بی بی سی کو بتایا کہ بورڈ نے اس معاملے پر بحث کی تھی جس کے بعد فیصلہ کیا گیا کہ یہاں قبرستان ہونا چاہیے۔

Image caption اسامہ بن لادن کے مکان کو مسمار کر دیا گیا تھا اور انتظامیہ نہیں چاہتی کہ یہاں اسامہ بن لادن کے نام پر کوئی یادگار بن جائے

مقامی لوگوں نے بتایا کہ انتظامیہ نہیں چاہتی کہ یہ جگہ اسامہ بن لادن کے حوالے سے کوئی یادگار بن جائے۔

مقامی صحافی شبیر حسین امام کے مطابق انتظامیہ کے سامنے متعدد تجاویز تھیں لیکن مختف وجوہات کی وجہ سے ان تجاویز پر عمل درآمد نہیں ہو سکا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ علاقہ کینٹونمنٹ بورڈ کی حدود میں آتا ہے۔

شبیر حسین امام کے مطابق یہ زمین اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بعد صوبائی حکومت کینٹونمنٹ بورڈ اور مقامی انتظامیہ کے درمیان متنازع بنی رہی ہے۔

اس بارے میں صوبائی حکومت کے ترجمان مشتاق غنی اور ایبٹ آباد کی ڈپٹی کمشنر عمارہ خٹک سے رابطے کی بارہا کوشش کی گئی اور انھیں پیغامات بھی بھیجے گئے لیکن ان سے رابطہ نہیں ہو سکا یا وہ اس بارے میں بات نہیں کرنا چاہتے تھے۔

Image caption مبینہ طور پر اسامہ اس گھر میں پانچ سال رہے تھے

بلال ٹاؤن کے اس مکان میں القاعدہ کے سابق سربراہ اسامہ بن لادن کی رہائش گاہ تھی اور ان کی ہلاکت کے بعد اس عمارت کو منہدم کر دیا گیا تھا اور اس پلاٹ کو بچے کھیل کے میدان کے طور پر استعمال کرتے تھے۔

القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کو مئی 2011 میں ایبٹ آباد کے اس مکان میں امریکی سکیورٹی اہلکاروں نے ایک خفیہ آپریشن میں ہلاک کر دیا تھا۔

اسی بارے میں