پی آئی اے کا پریمیئر سروس شروع کرنے کا اعلان

تصویر کے کاپی رائٹ PIA
Image caption سری لنکن ایئرلائنز کے A330 طیارے کی اکانومی کلاس کی تصویر

پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز کمپنی نے 14 اگست سے اپنے مسافروں کے لیے نئی اور بہتر پریمئر سروس کے آغاز کا اعلان کیا ہے۔

اس سروس کے لیے پی آئی اے چار نئے طیارے ویٹ لیز یعنی عملے کے بغیر حاصل کر رہی ہے جن سے پی آئی اے لندن کے ہیتھرو ایئرپورٹ پر اپنی پروازوں کا آغاز کرے گی۔

پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز کے چیئرمین اعظم سہگل نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ’پی آئی اے کی نئی پریمیئر سروس کے تحت مسافروں کو سفر کی بہتر سہولت ملے گی، طیارے بھی ہم کوشش کر رہے ہیں نئے حاصل کریں جو لیز پر ہوں گے۔‘

پی آئی اے کے مسافروں کو پی آئی اے عملے خصوصاً کیبن کے عملے سے شکایت رہتی ہیں کہ ان کا رویہ غیر پیشہ ورانہ ہوتا ہے جس کی وجہ سے پی آئی اے نے عملے کے لیے تین ہفتے کی تربیت کا اہتمام کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PIA

چیئرمین اعظم سہگل کے مطابق ’اس سب کے ساتھ ساتھ ہم کیبن کے عملے کو جن کا واسطہ مسافروں سے براہِ راست پڑتا ہے، بھی تربیت دیں گے، جس کے لیے ماہرین کراچی بلائے گئے ہیں۔‘

پی آئی اے کی پریمیئرسروس کے لیے کام کرنے والے عملے خصوصاً کیبین کے عملے کے لیے سری لنکا سے ماہرین کی ایک ٹیم کراچی میں ہے جو تین ہفتے تک پی آئی اے کے عملے کو خصوصی تربیت فراہم کرے گی۔

ہمارے ذرائع کے مطابق پی آئی اے نے سری لنکا کی قومی فضائی کمپنی سے چار ایئربس اے تھری تھرٹی طیاروں کو بغیر عملے کے لیز پر لینے کے معاہدے پر اتفاق کر لیا ہے جس کا باضابطہ اعلان آئندہ چند دنوں میں متوقع ہے۔

سری لنکن کے اے تھری تھرٹی طیارے جدید ترین سہولیات سے لیس اور صرف دو سال پرانے ہیں جنھیں سری لنکن ایئر لائنز خسارے کی وجہ سے لیز پر دے رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PIA

جب اس سلسلے میں پی آئی اے کے ترجمان سے پوچھا گیا تو انھوں نے تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا۔

تاہم پی آئی اے اس قبل یہ بات کہہ چکی ہے کہ طیاروں کے لیے دیے گئے اشتہار کے جواب میں سری لنکن ایئرلائنز کی طرف سے دلچسپی ظاہر کی گئی تھی جس کے بعد سے پی آئی اے کی انتظامیہ سری لنکا سے رابطے میں ہے اور اس کے سی ای او کولمبو جا چکے ہیں۔

اسی بارے میں