برطانوی خاتون کی ہلاکت، والد اور رشتہ دار زیرِ حراست

تصویر کے کاپی رائٹ kazam
Image caption پولیس کے مطابق تفتیش کے دوران معلوم ہوا ہے کہ سامعہ نے اپنے سابقہ شوہر شکیل سے باقاعدہ طلاق نہیں لی تھی

پاکستان کے ضلع جہلم میں پولیس نے پاکستانی نژاد برطانوی خاتون کے قتل کے الزام میں ان کے والد اور ایک قریبی رشتہ دار کو حراست میں لے کر تفتیش شروع کر دی ہے۔

سامعہ شاہد نامی 28 سالہ خاتون کی موت رواں ماہ کی 20 تاریخ کو پاکستان کے ضلع جہلم میں ان کے آبائی گاؤں پنڈوریاں میں واقع ہوئی تھی۔

برطانوی رکنِ پارلیمان ناز شاہ نے بھی وزیرِ اعظم پاکستان محمد نواز شریف کو خط لکھ کر مبینہ طور پر غیرت کے نام پر ہونے والے اس قتل کی تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔

پاکستان کے وزیرِ داخلہ چودہری نثار علی خان نے اس واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے اعلیٰ پولیس حکام کو اپنی نگرانی میں معاملے کی فوری اور شفاف تحقیقات کرنے قانون اور انصاف کے تقاضے پورے کرتے ہوئے جلد از جلد تفتیش مکمل کرنے کا حکم دیا ہے۔

سامعہ کے شوہر مختار کاظم نے الزام عائد کیا ہے کہ سامعہ کے گھر والوں نے انھیں خاندان سے باہر شادی کرنے کی وجہ سے قتل کیا ہے اور انھوں نے اس مقدمے میں سامعہ کے والدین، بہن اور ایک کزن کو نامزد کیا ہے۔

تھانہ منگلا کے ایک اہلکار نے بی بی سی اردو کے شہزاد ملک کو بتایا کہ شاہد اور مبین نامی ملزمان کو بدھ کو حراست میں لیا گیا۔

ان کے مطابق سامعہ کی ہلاکت کے بعد ملزمان کے بیانات اور پولیس کی تفتیش سے سامنے آنے والے شواہد میں تضادات کی بنا پر ان دونوں کو گرفتار کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

اہلکار کے مطابق مقدمے میں نامزد دونوں خواتین کو حراست میں لینے کے بارے میں تاحال فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ kazam
Image caption سامعہ کے شوہر مختار کاظم نے الزام عائد کیا ہے کہ سامعہ کے گھر والوں نے انھیں خاندان سے باہر شادی کرنے کی وجہ سے قتل کیا ہے

اس مقدمے کی تفتیش کی نگرانی کرنے والے جہلم کے ڈی پی او مجاہد اکبر نے بدھ کو مقامی ذرائع ابلاغ سے بات کرتے ہوئے کہا ہے صورتحال سامعہ کے پوسٹ مارٹم کی فورینزک رپورٹ سامنے آنے کے بعد ہی واضح ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ اب تک کی تفتیش سے یہ لگ رہا ہے کہ معاملہ خودکشی یا فطری موت کا نہیں ہے۔

انھوں نے یہ بھی بتایا کہ تفتیش کے دوران معلوم ہوا ہے کہ سامعہ نے اپنے سابقہ شوہر شکیل سے باقاعدہ طلاق نہیں لی تھی اور ان کی دوسری شادی میں بھی ان کے گھر والوں کی رضامندی شامل نہیں تھی۔

ایس ایس پی مجاہد اکبر نے کہا کہ بظاہر یہ لگ رہا ہے کہ سامعہ مفاہمت کی کوشش کے سلسلے میں اپنے والدین کے پاس آئی تھیں جبکہ مقدمے کی ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ سامعہ کو والد کی بیماری کا بہانہ کر کے بلایا گیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ اس مقدمے کی اصل صورتحال سامعہ کے پوسٹ مارٹم کی تفصیلی رپورٹ آنے اور ان کے سابقہ شوہر شکیل سے تفتیش کے بعد ہی واضح ہو سکے گی۔ شکیل اس وقت مفرور ہے اور ان کی تلاش جاری ہے۔

خیال رہے کہ سامعہ کے والد محمد شاہد نے منگل کو بی بی سی اردو کی شمائلہ خان سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ سامعہ کے شوہر کے طور پر صرف شکیل کو ہی جانتے ہیں اور مختار کاظم کا نام تو انھوں نے ابھی سُنا ہے۔

Image caption مختار کاظم کا دعویٰ ہے کہ ان کے پاس سامعہ کی طرف سے پاکستان آنے سے قبل اپنی دوستوں کو اپنی حفاظت کے خطرے سے متعلق پیغامات کے سکرین شاٹس بھی موجود ہیں

’یہ بالکل جھوٹی ایف آئی آر ہے۔ کاظم کا نام میں نے ابھی سنا ہے۔ میری بیٹی کے خاوند کا نام ہے محمد شکیل۔ وہ اُس کے ساتھ خوش باش، اُس کے گھر رہ رہ رہی تھی۔ وہ ممانی کی وفات پر انگلینڈ سے پاکستان آئی تھی اور اس کا واپس جانے کا کوئی ارادہ نہیں تھا۔‘

سامعہ کے والد کا اصرار ہے انھیں اپنی بیٹی کی اچانک موت کی وجوہات نہیں معلوم۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ جب 20 جولائی کو سامعہ کی سسرال پہنچے تو وہ سیڑھیوں کے پاس گری ہوئی تھی اور اس کے منہ سے جھاگ نکل رہی تھی۔ میں نے پولیس کو فون کیا اور پوسٹمارٹم کے لیے کہا۔

’ابتدائی رپورٹ میں کسی قسم کا کوئی تشدد یا کچھ نہیں آیا۔ رپورٹ آئےگی تو پتا چلے گا کیا ہوا۔ میں تو خود چاہتا ہوں کہ پتا چلے کہ میری بیٹی کے ساتھ کیا ہوا۔‘

مدعی مختار کاظم کا دعویٰ ہے کہ ان کے پاس سامعہ کی طرف سے پاکستان آنے سے قبل اپنی دوستوں کو اپنی حفاظت کے خطرے سے متعلق پیغامات کے سکرین شاٹس بھی موجود ہیں جن میں سامعہ نے دوستوں سے کہا ہے کہ کچھ غلط ہونے کی صورت میں وہ برطانوی پولیس کو مطلع کریں۔

اسی بارے میں