پاک بھارت سرحدی محافظوں کے مذاکرات ختم

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption آئندہ سال کے اوائل میں ہونے والے اجلاس کی میزبانی بھارت کرے گا

پاکستان اور بھارت کے سرحدی محافظوں کے ششماہی مذاکرات پاکستان کے شہر لاہور میں ختم ہوگئے ہیں۔تین روزہ مذاکرات میں غلطی سے سرحد عبور کرنے والے دونوں ممالک کے شہریوں کی فوری واپسی پر اتفاق کیا گیا اور طے پایا کہ سرحد سے متعلقہ مسائل کو مقامی کمانڈروں کی فلیگ میٹنگز میں حل کرنے کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔

٭جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کی مشترکہ تحقیقات پر اتفاق

٭انڈین وزیراداخلہ آئندہ ہفتے پاکستان آئیں گے

بھارتی سکیورٹی فورسز اور پاکستان رینجرز کے حکام کے درمیان مذاکرات لاہور میں پاکستان رینجرز کے ہیڈ کوارٹزز میں ہوئے۔

24 رکنی بھارتی وفد کی قیادت بی ایس ایف کے ڈائریکٹر جنرل کشن کمار شرما نے کی جبکہ پاکستان کی نمائندگی پاکستان رینجرز پنجاب کے ڈائریکٹر جنرل، میجر جنرل عمرفاروق برکی نے کی۔

پاکستان کی وزارت خارجہ، وزارت داخلہ، پاکستان رینجرز سندھ، اینٹی نارکوٹکس فورس اور سروے آف پاکستان کے نمائندے بھی مذاکرات میں شریک رہے۔

مذاکرات کے بعد جاری کیے گئے مشترکہ اعلامیے کے مطابق مذاکرات دوستانہ ماحول میں ہوئے، اور مشترکہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ ہر سطح پر رابطوں کو تیزاور موثر بناکر سرحدی مسائل کو حل کیا جائے گا۔ اور اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ بارڈر مینیجمنٹ کے چھوٹے ایشوز مقامی بارڈر کمانڈروں کی فلیگ میٹنگز میں طے کیے جائیں گے۔

مذاکرات میں غلطی سے سرحد عبور کرنے والے معصوم شہریوں کی فوری اپنے ممالک واپسی کو بھی یقینی بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

تین روزہ اجلاس میں منشیات اور دیگر ممنوعہ اشیا کی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے دونوں جانب سے کیے جانے والے اقدامات کی بھی توثیق کی گئی اور معلومات کی شیئرنگ کو مزید بہتر بناکر سرحد پر غیرقانونی نقل و حرکت کو روکنے کے لیے مزید بہتر اقدامات پر زور دیا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان رینجرز اور بھارتی سکیورٹی فورسز کے کمانڈروں کے درمیان فلیگ میٹنگز اور بارڈر کورآڈینشن کا سلسلہ سارا سال چلتا رہتا ہے

پاکستان اور بھارت کی ورکنگ باؤنڈری پر سیز فائر کی خلاف ورزی کے واقعات میں کمی کو سراہا گیا اور دونوں جانب سے اس خواہش کا اظہار کیا گیا کہ غلط فہمیوں کو کم کرنے کے لیے رابطوں میں تیزی لائی جائے۔

ورکنگ باونڈری پر دفاعی تعمیرات کے مسئلے پر بھی غور کیا گیا اور مسائل کا باہمی اور دوستانہ حل نکالنے کا فیصلہ کیا گیا۔

مشترکہ اعلامیے کے مطابق بی ایس ایف اور پاکستان رینجرز کے حکام دونوں ممالک کے عوام کی خوشحالی اور بہتری کے لیے اچھے سرحدی ماحول کو فروغ دینے پر متفق پائے گئے۔

مذاکرات کے اختتام پر بی ایس ایف کے ڈی جی کرشن کمار شرما اور پاکستان رینجرز پنجاب کے ڈی جی، میجر جنرل عمر فاروق برکی نے مشترکہ اعلامیے پر دستخط کیے۔

خیال رہے کہ دونوں ممالک کے سرحدی محافظوں کی قیادت کا اجلاس ہر چھ ماہ بعد ہوتا ہے۔

آئندہ سال کے اوائل میں ہونے والے اجلاس کی میزبانی بھارت کرے گا، پاکستان رینجرز پنجاب کے ترجمان میجروحید بخاری کے مطابق ششماہی اجلاسوں کے علاوہ پاکستان رینجرز اور بھارتی سکیورٹی فورسز کے کمانڈروں کے درمیان فلیگ میٹنگز اور بارڈر کورآڈینشن کا سلسلہ سارا سال چلتا رہتا ہے۔

اسی بارے میں