’امریکی شہری کے کاغذات مکمل ہیں تو گرفتاری کیوں؟‘

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption ’ملزم نے پاکستان میں شادی کر رکھی ہے اور وہ اپنے بچوں سے ملنے پاکستان آیا تھا‘

راولپنڈی کی ایک مقامی عدالت نے تفتیشی اداروں کے اہلکاروں سے استفسار کیا ہے کہ بلیک لسٹ قرار دیے گئے امریکی شہری میتھیو بیرٹ کے پاس جب پاکستان آنے کے تمام دستاویزات موجود ہیں تو پھر اُنھیں کس جرم میں گرفتار کیا گیا ہے۔

* پاکستان میں دوبارہ داخل ہونے پر امریکی شہری گرفتار

راولپنڈی کے مقامی جج نوید اقبال کی عدالت میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں نے ملزم میتھیو کو پیش کیا۔

ملزم نے سماعت شروع ہونے سے پہلے عدالت کو بتایا کہ اس نے پاکستان میں شادی کر رکھی ہے اور وہ اپنے بچوں سے ملنے پاکستان آیا تھا۔ اُنھوں نے کہا کہ اُس نے ہوسٹن میں پاکستانی قونصل خانے سے ویزا حاصل کیا تھا جس کی بنا پر وہ پاکستان آیا ہے۔

میتھیو بیرٹ نے کہا کہ اُن پر حساس تنصیبات میں داخل ہونے کا الزام ثابت نہیں ہوا جس کی بنا پر سپریم کورٹ نے اُن کے خلاف درج ہونے والا مقدمہ ختم کرنے کا حکم دیا تھا۔

سماعت کے دوران ملزم اس بارے میں کوئی دستاویزی ثبوت عدالت میں پیش نہیں کرسکا۔ اس مقدمے کے سرکاری وکیل کا کہنا تھا کہ ملزم کے خلاف ماضی میں درج ہونے والے مقدمات ابھی تک موجود ہیں اور اُن مقدمات کی تفتیش بھی ملزم سے کی جائے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عدالت نے ملزم کو یقین دلایا کہ اس کے ساتھ ناانصافی نہیں ہوگی

تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایا کہ ملزم میتھیو بلیک لسٹ قرار دیے جانے کے بعد امریکہ میں بھی گرفتار ہوا تھا۔

عدالت نے استفسار کیا کہ ملزم کے خلاف کونسے مقدمات امریکہ اور پاکستان میں درج ہیں جس پر تفتیشی افسر کا کہنا تھا کہ اس کی تفتیش مکمل ہونے کے بعد اس بارے میں آگاہ کیا جائے گا۔

عدالت نے ملزم کو یقین دلایا کہ اس کے ساتھ ناانصافی نہیں ہوگی اور عدالت نے تفتیشی ٹیم کو حکم دیا کہ اس مقدمے کی تفتیش میں تمام قانونی تقاضے پورے کرے۔

تفتیشی افسر نے ملزم کا سات روزہ جسمانی ریمانڈ حاصل کرنے کی استدعا کی تاہم عدالت نے ملزم میتھیو بیرٹ کاتین روزہ جسمانی ریمانڈ دے کر تفیشی ٹیم کے حوالے کردیا۔ عدالت نے ملزم کو 12 اگست کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

اسی بارے میں